Extremist Deobandi terrorist massacres 20 Shia and Sunni Muslims in Kohat

by admin

Extremist Deobandis consider Shia Muslims as heretics and non-Muslims.

As usual, the ISI and JI dominated Pakistani media is distorting the fact. The Kohat attack today was clearly sectarian, aimed at a bus carrying passengers, most of them Shia but also some moderate Sunnis, who were travelling to the nearby tribal district of Orakzai, where Pakistan has encouraged displaced civilians to return after an anti-Taliban offensive.

According to daily Dawn:

A teenage suicide bomber killed 19 people at a busy Pakistani bus terminal on Wednesday, the third attack in three days as the country stepped up security for the holy month of Muharram.

The bomber blew himself up in Kohat, home to at least half a million people and one of the main garrisons for the Pakistan military, in the northwestern province of Khyber Pakhtunkhwa.

“It was a suicide blast. The death toll has risen to 17,” Kohat police chief Dilawar Bangash told AFP, adding that 25 others were wounded, seven of them seriously. (Death toll has risen to 19: DawnNews)

Police said the bomber blew himself up at the door of a bus carrying passengers to the nearby tribal district of Orakzai, where Pakistan has encouraged displaced civilians to return after an anti-Taliban offensive.

“We have found the head and legs of the suicide bomber,” said Bangash. The bus terminal is in Tirah bazaar, the main market in the town.

The attack coincided with the start of Muharram, which traditionally sees tensions rise between Pakistan’s majority Sunni Muslim and minority Shia Muslim community.

“It is true there were more Shias killed in the attack but there were a number of Sunnis also who died in the blast. So we cannot say who was the target,” said Bangash, adding the suicide bomber was aged 15 to 16.

Almost all Shia Muslims and moderate Sunni Muslims dislike extremist Deobandis of Taliban because of the latter’s intolerant (un)Islamic ideology and violent tactics. Therefore, extremist Deobandis consider it legitimate to kill Shia and moderate Sunni Muslims.

The attack occurred on the first day of the Islamic month of muharram, which often sees attacks by extremist Deobandi groups on minority Shia Muslims.

Last December, a suicide bomber blew up a Shia Muslim procession in Karachi killing 25 people. Such attacks have prompted the security agencies to take extra measures during the Muharram rituals December 8-17.

The Taliban and affiliated organisations like Sipah-e-Sahaba, Laskhar-e-Jhangvi (LeJ) and Jundullah pose severe threats to Shias and moderate Sunnis during Muharam.

Sunnis and Shias: United against extremist Deobandi terrorists

“On Sunday, an agreement between the Shia and Sunni sects in Orakzai Agency facilitated the opening of roads that remained closed for the past five years,” Abdul Sami Paracha, a journalist in Kohat, told Central Asia Online. In other areas, similar agreements bind both sects to remain peaceful during Muharram, he said. Under the agreements, the representatives of the sects would ensure peace during Muharram by taking measures through mutual consultations. Committees have been formed in different districts that would ensure that the people stay away from businesses during Muharram’s processions,” Maulana Zahoorullah, a member of a Peshawar-based committee tasked to maintain peace in Muharram, said. The committees were formed to ensure that people close their businesses to respect Muharram. (Source)

Extremist Deobandis (of Taliban / Sipah-e-Sahaba) are indeed interested in sabotaging any sign of unity between moderate Sunnis and Shias.

4 Comments to “Extremist Deobandi terrorist massacres 20 Shia and Sunni Muslims in Kohat”

  1. اثرات کوہاٹ سے افغان سرحد تک

    رفعت اللہ اورکزئی
    بی بی سی اردو ڈاٹ کام، پشاور

    کوہاٹ سے لے کر کرم ایجنسی کے افغان سرحد تک یہ سارے علاقے ایک دوسرے ایسے جڑے ہوئے ہیں کہ ان میں کسی ایک مقام پر بھی ایک چھوٹے سے واقعہ سے سارا علاقہ کشیدگی کی لپیٹ میں آسکتا ہے

    پاکستان کے صوبہ خیبر پختون خوا کے جنوبی شہر کوہاٹ میں بدھ کو ہونے والے مبینہ خودکش حملے کا نشانہ بظاہر تو واضح نہیں لیکن اگر موقع محل کے حوالے سے اس کا جائزہ لیا جائے تو اس کے اثرات کوہاٹ سے لے کر افغان سرحد تک محسوس کیے جاسکتے ہیں۔

    دھماکہ تیراہ بازار میں کلایہ اڈے میں ہوا جہاں سے عام طورپر لوگ اورکزئی ایجنسی جاتے ہیں۔ کلایہ لوئر اورکزئی ایجنسی کا ہیڈ کوارٹر ہے جہاں پر اکثریت میں شعیہ قبائل آباد ہیں۔

    کوہاٹ پولیس کا کہنا ہے کہ اب تک کی تفتیش سے جو بات سامنے آئی ہے اس سے یہ واضح ہوتا ہے کہ شاید اس حملے کا ٹارگٹ اہل تشیع تھے لیکن ہلاک ہونے والوں میں سنی مسلک سے تعلق رکھنے والے افراد بھی شامل ہیں۔

    دھماکہ بھی ایک ایسے وقت ہوا ہے جب آج ہی ماہِ محرم کا پہلا دن ہے۔

    کوہاٹ اور اس سے ملحق واقع ضلع ہنگو، اورکزئی ایجنسی اور کرم ایجنسی کا شمار بنیادی طور پر انتہائی حساس علاقوں میں ہوتا ہے۔ ان علاقوں میں فرقہ وارانہ واقعات کی ایک بھیانک تاریخ موجود ہے۔

    گزشتہ سال پورے ملک میں محرم کا مہینہ پرامن طریقے سے گزرا تھا جس سے لوگوں نے سکھ کا سانس لیا تھا۔ اس سال ان علاقوں میں پہلے کے مقابلے میں اتنی زیادہ تشویش دیکھنے میں نہیں آرہی تھی لیکن حالیہ واقعہ سے یقینی طورپر فضا سوگوار ہوگئی ہے۔

    اورکزئی اور کرم ایجنسی میں تو پہلے ہی سے کشیدگی چلے آرہی ہے۔ ایک علاقے میں شدت پسند تنظیموں کے خلاف آپریشن جاری ہے جبکہ دوسرے ایجنسی میں ٹارگٹ کارروائیاں اور اس کے ساتھ ساتھ پچھلے دو سالوں سے تمام مرکزی سڑکیں بھی بند ہیں۔ اس ایجنسی میں سکیورٹی فورسز کی حفاظت میں جانے والے عام افراد کے قافلے بھی نشانہ بن رہے ہیں۔

    ضلع ہنگو میں گزشتہ چند برسوں سے محرم کے ماہ میں ہر سال فرقہ وارانہ تشدد کے واقعات ہوتے رہے ہیں۔ صرف پچھلے سال محرم کا مہینہ پرامن طریقے سے اختتام پزیر ہوا تھا۔ ان پرتشدد لڑائیوں کو دیکھتے ہوئے ہر مرتبہ مقامی باشندے یوم عاشورہ سے پہلے پہلے علاقے سے نقل مکانی کرکے محفوظ مقامات پر منتقل ہوتے تھے۔
    اورکزئی ایجنسی میں آپریشن کی وجہ سے زیادہ تر بے گھر افراد ہنگو میں پناہ لیے ہوئے ہیں جن میں دونوں فرقوں کے افراد شامل ہیں۔ دوسری طرف خود ضلع ہنگو بھی فرقہ وارانہ واقعات سے بری طرح متاثر رہا ہے۔ یہاں بھی محرم کے جلوس کے حوالے سے ایک مسئلہ پہلے ہی فریقین کے مابین چل رہا ہے۔

    ضلع ہنگو میں گزشتہ چند برسوں سے محرم کے ماہ میں ہر سال فرقہ وارانہ تشدد کے واقعات ہوتے رہے ہیں۔ صرف پچھلے سال محرم کا مہینہ پرامن طریقے سے اختتام پزیر ہوا تھا۔ ان پرتشدد لڑائیوں کو دیکھتے ہوئے ہر مرتبہ مقامی باشندے یوم عاشورہ سے پہلے پہلے علاقے سے نقل مکانی کرکے محفوظ مقامات پر منتقل ہوتے تھے۔

    اس مرتبہ محرم کا ماہ ابھی شروع بھی نہیں ہوا تھا کہ مقامی لوگوں نے دوسرے شہروں میں منتقل ہونے کی تیاریاں شروع کردی تھی۔ یہ بھی اطلاعات ہیں کہ ہنگو میں امن و امان برقرار رکھنے کےلیے چند دن پہلے سکیورٹی فورسز کے کچھ اضافی دستے بھی پہنچے ہیں۔

    http://www.bbc.co.uk/urdu/pakistan/2010/12/101208_kohat_background_rza.shtml

  2. May God save Pakistan from Deobandis and Wahabbis.

  3. To LUBP Editor.
    On media like Dawn News, Deobandi extremists are campaigning and propagating against alleged corruption of Religous affairs minister solely on sectarian grounds. In the comments section abusive language is being used. Can you please present a moderate and non biased view of situation.

  4. All religious Extremist Thinking is
    Poisson for our country so please promote to democracy and art culture activities , Sufism ! its a only solution of our problems !

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: