Congrats to Imran Khan and Iftikhar Chaudhry on Mastung victory – by Riaz Malik

by admin

About the author: Riaz Malik Corner

I want to extend my heartiest felicitations to Chairman PTI, Hazrat Imran Khan and Chief Justice of the Supreme Court, Iftikhar Muhammad Chaudhary on the glorious victory obtained by Islamo-Marxist rebels, Lashkar-e-Jhangvi.  Today, on the plains of Mastung, these brave rebels bravely faught off the nuclear-armed Iranian Fifth columnist imperialists and managed to kill 25 of them. Without the support of the Supreme Court, the leader of Lashkar-e-Jhangvi, the great Malik Ishaq would still be rotting in jail and would have been unable to rally the troops against the godless Rafizoon.
If there had been no Hazrat Imran Khan, there would not have been an effective spokesperson to explain to the Pakistanis that Lashkar is a response to the Amriki war on terror.  Now thanks to Imran Khan, we all know that there was no extremism in Pakistan before 9/11.  For his support, LeJ and its parent organization, Sipah Sahaba is ever greatful and does its best to give PTI full support during the dharnas.  Let us also not forget Imran Khan’s unstinting support for the Judiciary that freed Malik Ishaq.
I would also like to thank brave and struggling journalist, the gentle, polite soul that is Ejaz Haider for exposing the Sabai agenda of the Hazara Fifth columnists.  Today’s victory in Mastung by the anti-imperialist forces of Lashkar Jhangvi, friends of the Taliban, would not have been possible without Ejaz’s intellectual support. However, Ejas is not alone, there are many noble souls in Pakistan’s mainstream and social media who are following the model of this great man, defender of the Lashkar of Jhangvi Shaheed, who I will name and appreciate in a separate email. I would also like to commend Shahbaz Sharif and Rana Sanaullah on their excellent services in securing the freedom of the Leader of the Faithful, Hazra Malik Ishaq of the LeJ-SSP.
Meanwhile, can someone please attack this filth written to support American and Iranian imperialism in Pakistan:
“The same Lashkar-e-Jhangvi  that has killed 30 Shia Muslims today are also the ones who are also killing Ahmadi Muslims and Barelvi Muslims as well as those Deobandi Muslims who oppose the misuse of their beliefs to bolster the Jihad Enterprise of Pakistan’s military establishment. Lashkar-e-Jhangvi is part of the Jihad factory of the ISI that has also developed similar units like Sipah-e-Sahaba, Jaish-e-Muhammad (JeM) and the main militant outfit with its network of commanders, the Taliban.  Allied with the Al Qaeda,  they all share the same bigoted, misogynist and supremacist views and are an essential part of the foreign and domestic policy of the Deep State (i.e., Pakistan army) for the attainment of “Strategic Depth” in Afghanistan.” Intellectual dishonesty in misrepresenting Shia massacres in Pakistan.
What nonsense. Everyone knows that it is Jews and Hindus and Blackwater that is doing all the killings.  See how the only leader who has never been given a chance in Pakistan, Imran Khan, exposes the Zionist propaganda filth!
Further silly attacks without proof on Imran Khan’s truthfulness:
“Imran Khan mantains with a straight face that there was no extremism in Pakistan and no suicide attacks either before 9/11  and none of the pliant interviewers (including Elliot Spitzer of CNN)  bothers to contradict this with the facts  that such attacks took place as early as 1995; a full 6 years before 9/11! Imran Khan is symbolic of the moral decripitude and mendacity of educated Pakistanis whose ignorance, bigotry and identity crisis has made them accept the most outlandish rubbish that protects the dark ambitions of Pakistan’s military establishment.  For these soulless elites, the massacres of Shia Muslims can be explained away with half-truths and outright lies.” Intellectual dishonesty in misrepresenting Shia massacres in Pakistan
Look at this rubbish. Everyone knows that the 1995 “attack” on the Egyptian Embassy is nonsense. It was just a loud tire puncture and besides, everyone knows there were no Egyptians in the building that day. Ha Ha. I counter the lies against Hazrat Imran Kahn!
There are further attacks on Zia ul Haq, The Greatest:

“The massacre of Shia Muslims in Pakistan is also often misrepresented and justified (yes, justified) as part of an ongoing sectarian battle between Iran and Saudi Arabia.  Completely missing from this dishonest narrative is the role of the Pakistan State and the fact that since Shia Muslims opposed the forced Islamization policies of military dictator Zia ul Haq,  they were made the targets of the State.The Pashtun Shia Muslims of Parachinar and the Gilgiti Shia muslims opposed the the use of their territory for the purpose of “Strategic Depth” in Afghanistan and Kashmir and  they have been massacred regularly since the 1980′s. In 1980, hundreds of thousands of Shia Muslims launched a peaceful sit-in protest in the capital city of Islamabad to oppose the  enforcement of the “Saudi Islamic” Zakat and Ushar Ordinance and since then, they have paid the price.  If the continuing massacres of Shia Muslims in Pakistan is justified via these dishonest narratives (how can killing of anyone be justified boggles the mind), then why are the Sunni Muslims (Barelvi, Deobandi, Ahmadi) and religious minorities (Hindu, Christain, Sikhs) being killed by the same perpetrators who are also killing Shia Muslims? The answer is in the question.”, Intellectual dishonesty in misrepresenting Shia massacres in Pakistan

This is too much. This vile abuse against the most benevolent caliph Pakistan has known is too much for me. General Zia ul Haq is the ideological father, mentor and friend who persuaded Imran Khan to come out of retirement and wanted to make him a minister before he became a victim of the imperialists. Sigh.

5 Responses to “Congrats to Imran Khan and Iftikhar Chaudhry on Mastung victory – by Riaz Malik”

  1. جب پاکستان پر فرقہ واریت کا سایہ تھا

    علی سلمان
    بی بی سی اردو ڈاٹ کام، لاہور

    وزیر اعلیٰ پنجاب شہباز شریف کےدور میں کالعدم تنظیموں کو سختی سے کچلنے کا حکم جاری ہوا

    کالعدم سپاہ صحابہ کے رہنما ملک اسحاق کی رہائی نے پاکستان کے اس دور کی یاد تازہ کر دی ہے جب پاکستان شدت پسندی کے خلاف امریکہ کی شروع کردہ کسی جنگ کا حصہ بھی نہیں تھا اور نہ ہی کوئی نائن الیون ہوا تھا لیکن اس کے باوجود قتل و غارت گری نے ملک کی چولیں ہلا کر رکھ دی تھیں۔

    یہ دور فرقہ وارانہ پرتشدد واقعات کے عروج کا دور تھا۔آج کل کی طرح اس زمانے میں بھی پاکستان میں ہونے والے پرتشدد واقعات کے ڈانڈے بیرون ملک جوڑے جاتے تھے لیکن زاویے ذرا مختلف تھے۔

    مثال کے طور پر سرکاری طور پر نہ سہی لیکن پولیس حکام ایک طرف ایران اور دوسری طرف سے افغانستان اور عراق کا نام لیتے تھے اور ہمیشہ کی طرح ٹھوس ثبوت کوئی پیش نہیں کیا جاتا تھا۔

    شعیہ اور سنی تنظیمیں ایک دوسرے فرقے کے لوگوں کو نیکی کا کام سمجھ کر چن چن کر قتل کررہی تھیں۔

    کالعدم سپاہ صحابہ کے ایک عہدیدار نے بتایا تھا کہ ملک اسحاق کی گرفتاری کالعدم سپاہ صحابہ اور پولیس کے درمیان بہت بڑے تناؤ کا سبب بن گئی تھی کیونکہ اس عہدیدار کے مطابق ملک اسحاق کو پولیس نے مذاکرات کا جھانسہ دے کر بلوا کر گرفتار کرلیا تھا اور بعد میں انہیں سو افراد کے قتل کے الزام میں چالان کرنے کی کوشش کی تھی۔
    یہ نوے کی دہائی کے آخری سال تھے۔ وزیر اعلیٰ پنجاب شہباز شریف کےدور میں کالعدم تنظیموں کو سختی سے کچلنے کا حکم جاری ہوا۔کالعدم تنظیموں کے پہلے سے گرفتار کارکنوں کو مبینہ مقابلوں میں ہلاک کیا جانے لگا۔صرف ایک ڈی ایس پی طارق کمبوہ ساٹھ سے زیادہ کارکنوں کو مبینہ مقابلے میں مارچکے تھے۔

    جواباً طارق کمبوہ تو قتل ہوئے ہی لیکن بھاری مینڈیٹ والے وزیر اعظم میاں نواز شریف پر ایک خوفناک قاتلانہ حملہ ہوچکا تھا۔وزیر اعلیٰ شہباز شریف کو قتل کی دھمکیاں مل رہی تھیں۔

    لشکر جھنگوی کے سربراہ ریاض بسرا ایک ڈراؤنے خواب کی طرح پولیس حکام کے ہواس پر سوار تھے۔وہ ان کے لیے ایک ایسا چھلاوہ بن گئے تھے جو کبھی نواز شریف کی کھلی کچہری میں ان سے امداد وصول کر کے ان کا منہ چڑاتا تو کبھی اخبارات میں طویل ٹیلی فون کر کے اپنے بیانات لکھوا کر پولیس کے سینے پر مونگ دلتا۔

    میڈیا پر ہر طرف ریاض بسرا کا نام چھایا ہوا تھا لیکن یہ مکمل حقیقت نہیں تھی۔

    فرقہ وارایت کے خلاف کام کرنے والے سی آئی ڈی اور سی آئی اے کے افسران اس نتیجے پر پہنچ چکے تھے کہ تمام بڑے واقعات کا اصل منصوبہ ساز کوئی اور ہے اور وہ پولیس افسران براہ راست اس پر ہاتھ ڈالنا چاہ رہے تھے۔

    کالعدم تنظیم کے عہدیداروں نے خود بتایا تھا کہ ملک اسحاق نے جیل سے مذاکرات شروع کیے اور پولیس افسران کو مشکل میں ڈال دیا گیا
    وہ نام تھا ملک اسحاق۔میڈیا کو ملک اسحاق کے بارے میں اس وقت پتہ چلا جب پولیس نے ملک اسحاق کو گرفتار کرلیا۔

    کالعدم سپاہ صحابہ کے ایک عہدیدار نے بتایا تھا کہ ملک اسحاق کی گرفتاری کالعدم سپاہ صحابہ اور پولیس کے درمیان بہت بڑے تناؤ کا سبب بن گئی تھی کیونکہ اس عہدیدار کے مطابق ملک اسحاق کو پولیس نے مذاکرات کا جھانسہ دے کر بلوا کر گرفتار کرلیا تھا اور بعد میں انہیں سو افراد کے قتل کے الزام میں چالان کرنے کی کوشش کی تھی۔

    ویسے تو پولیس شدت پسندوں کو پکڑ بھی رہی تھی اور ’مقابلوں‘ میں ہلاک بھی کیا جارہا تھا لیکن دو باتیں ایسی تھیں جس کی وجہ سے کالعدم لشکر جھنگوی کے کارکنوں کا غصہ اپنے عروج پر تھا۔ایک تو یہ کہ ان کے حقیقی لیڈر پکڑا گیا اور دوسرے یہ کہ انہیں دھوکے سے گرفتار کیا گیا۔

    کالعدم تنظیم کے عہدیداروں نے خود بتایا تھا کہ ملک اسحاق نے جیل سے مذاکرات شروع کیے اور پولیس افسران کو مشکل میں ڈال دیا۔

    ملک اسحاق ایک ایسی شخصیت تھی جس کے مبینہ مقابلے کے بارے میں سوچ کر بھی جعلی مقابلے کرنے والے پولیس افسروں کے پسینے چھوٹ جاتے تھے کیونکہ ایک ڈی ایس پی طارق کمبوہ سمیت متعدد پولیس افسر انہیں تنظیموں کے کارکنوں کے ہاتھوں قتل ہوچکے تھے۔

    اس دورمیں دو پولیس افسروں طارق پرویز اور شوکت جاوید کی ذاتی سکیورٹی میں کئی گنا اضافہ کر دیا گیا تھا۔ ملک اسحاق کے پیغامات نہ صرف پنجاب بلکہ پاکستان کی اعلیٰ ترین شخصیات کو پہنچائے گئے۔

    کہانیاں تو بہت گردش کرتی رہیں لیکن تصدیق کرنا مشکل تھا۔ کالعدم سپاہ صحابہ کے ایک کارکن نے بتایا تھا کہ یہ دھمکی دی گئی تھی کہ اگر انہیں نہ چھوڑا گیا تو یکم اکتوبر کو چوبیس گھنٹوں کے اندر سو افراد مارے جائیں گے اور حکومت کا تختہ بھی الٹا جاسکتا ہے۔

    اس سے آگے کی کہانی اس دور کے ڈی ایس پی عمر ورک نے سنائی۔ وہ ان دنوں لاہور میں سی آئی اے میں سپرنٹنڈنٹ پولیس ہیں اور انہوں نے کبھی اس کی تردید بھی نہیں کی۔

    انہوں نے شدت پسندوں کے ایک گروہ کو پکڑا تھا جس سے ہونے والے تفتیش اور انکشافات انہوں نے مجھے بتائے۔

    اس پولیس تفتیش کے مطابق اس دھمکی کے بعد ہوا یہ کہ ریاض بسرا کی سربراہی میں افغانستان کے شہر خوست میں کالعدم تنظیم کے ساٹھ پاکستانی شدت پسندکارکنوں کا ایک ا جلاس ہوا۔

    ملک اسحاق کی رہائی کے بعد ایک نیا سوال بھی پیدا ہوا کہ کیا فرقہ وارانہ کالعدم تنظیموں کی خون بہانے کی اہلیت قصہ پارینہ بن چکی؟آج بھی باقی ہے؟ یا پہلے سے بڑھ چکی ہے؟
    افغانستان میں ان دنوں طالبان حکومت تھی اور یہ بات کسی سے ڈھکی چھپی نہیں تھی کہ اس حکومت کو آئی ایس آئی کی مکمل حمایت حاصل تھی۔

    پولیس تفتیش کے مطابق ان ساٹھ افراد کو پانچ پانچ افراد کی ٹیموں میں تقسیم کیا گیا اور انہیں کراچی لاہور حیدرآباد ملتان سمیت پاکستان کے تمام بڑے شہروں میں بھیجا گیا۔انہوں نے اپنا ہدف ایک دن میں تو نہیں البتہ دو تین روز میں پورا کرلیا۔

    وزیر اعلیٰ شہباز شریف چیخ چیخ کر کہتے رہے کہ ان وارداتوں میں طالبان ملوث ہیں اب یہ بات کوئی راز نہیں رہی کہ طالبان کو آئی ایس آئی کی مکمل حمایت حاصل رہی ہے۔

    بارہ اکتوبر سنہ انیس سو ننانوے کو نواز شریف کی حکومت کا تختہ الٹا جاچکا تھا۔ فوجی حکمران پرویز مشرف نے اقتدار سنبھالا جس کے بعد فرقہ وارانہ تشدد میں حیرت انگیز کمی ہوگئی۔

    فوجی حکمرانی کے فوری بعد فرقہ وارایت میں کمی نے اس سوال کو جنم دیا ہی ہے کہ فوجی حکومت کا شدت پسند تنظیموں پر زیادہ اثرورسوخ ہوتا ہے۔

    ملک اسحاق کی رہائی کے بعد ایک نیا سوال بھی پیدا ہوا کہ کیا فرقہ وارانہ کالعدم تنظیموں کی خون بہانے کی اہلیت قصہ پارینہ بن چکی؟آج بھی باقی ہے؟ یا پہلے سے بڑھ چکی ہے؟

    http://www.bbc.co.uk/urdu/pakistan/2011/07/110716_malik_ishaq_a.shtml

  2. خمینی چاہیے

    محمد حنیف
    بی بی سی اردو ڈاٹ کام، کراچی

    ’حالات دیکھ کر لگتا ہے کہ یہاں پر مچھر مارنا زیادہ مشکل ہے شیعہ کو مارنا نسبتا آسان‘

    مستونگ میں زیارت پر جانے والے اہل تشیع کے جنازوں کو دیکھ کر مجھے وہ نادان پاکستانی یاد آئےجو ہمیشہ یہ کہتے پائے جاتے ہیں کہ اس ملک کو ایرانی انقلاب کی ضرورت ہے۔

    ہمارے کئی اداریہ نویس اور دانشور ایران کے صدر احمدی نژاد کو اپنا ہیرو مانتے ہیں۔ دن رات یہ ماتم کرتے ہیں کہ اس مٹی سے کوئی ایسا سادہ دل اور جرآت مند رہنما پیدا کیوں نہیں ہوتا جو امریکہ کو آنکھیں دکھا سکے۔

    رکشہ ڈرائیور، بینکار حتّی کہ عبدالستار ایدھی بھی یہ کہتے پائے جاتے ہیں کہ اس ملک کو ایک خمینی کی ضرورت ہے۔

    کیا ان محب وطن شہریوں کو احساس ہے کہ اگر اس ملک میں اگر احمدی نژاد یا خمینی پیدا ہو تو اُس کی عمر کتنی طویل ہو گی، اور اُسکے بعد کیا ہو گا؟

    غالباً وہی جو مستونگ میں ہونے والی بربریت کے بعد ہوا۔ تاسف، مذمت، سوگ اور پھر خفیہ ہاتھ پر الزام۔

    کیا پوری قوم نہیں جانتی کہ ہماری گلیوں مسجدوں اور منبروں سے کافر کافر شیعہ کافر کے جو نعرے گونجتے ہیں اُنہیں فوج، پولیس، اور خفیہ ایجنسیوں نے تو کیا روکنا تھا کبھی کسی محلے دار یا غازی کو بھی یہ توفیق ہوئی ہے کہ مودب ہو کر کہے کہ بھائیوں یہ فیصلہ اللہ پر چھوڑ دو کہ کون کافر ہے اور کون نہیں ۔
    ملک کے حالات دیکھ کر لگتا ہے کہ یہاں پر مچھر مارنا زیادہ مشکل ہے شیعہ کو مارنا آسان۔ رحمان ملک یہ کہہ کر اپنی ذِمے داری سناتے ہیں کہ اِن زائرین کو چاہیے تھا پہلے ہمیں بتا تو دیتے کہ جا کہاں رہے تھے۔

    ہلاک ہونے والوں کی لاشیں ابھی مردہ خانے بھی نہیں پہنچی تھیں کہ لشکر جھنگوی نے حملے کی ذمہ داری قبول کر لی۔ ٹی وی اینکرز اپنی ازلی معصومیت کے ساتھ رات کو پھر یہ پوچھتے پائے گئے کہ اس کے پیچھے کس کا ہاتھ ہو سکتا ہے؟

    چند ماہ پہلے پاکستان میں شیعہ کافر، مُسلح مہم کے سالار ملک اِسحاق جب لاہور کی ایک عدالت سے اپنی معصومیت کا سرٹیفکیٹ لے کر رہا ہوئے تو اُن کا اِستقبال پھولوں کی پتیاں نچھاور کر کے کیا گیا۔

    ایک ٹی وی اینکر نے لائیو ٹی وی پر اُن سے پوچھا کہ اب اُن کا لائحہ عمل کیا ہو گا۔ ملک اِسحاق نے اُتنی ہی معصومیت سے فرمایا کہ وہ کریں گے جو پہلے کرتے تھے۔ نہ انٹرویو کرنے والے نہ ٹی وی دیکھنے والوں کو یہ جاننے کے ضرورت تھی کہ اُن کا مشن کیا ہے۔ اُن پر درجنوں شیعہ شہریوں کے قتل کا الزام تھا جن میں سے ایک بھی ثابت نہ ہو سکا۔

    پاکستان میں شیعہ کافر، مُسلح مہم کے سالار ملک اِسحاق جب لاہور کی ایک عدالت سے اپنی معصومیت کا سرٹیفکیٹ لے کر رہا ہوئے تو اُن کا اِستقبال پھولوں کی پتیاں نچھاور کر کے کیا گیا۔
    لیکن یہ ظاہر ہے کہ ملک اِسحاق کا لشکر جھنگوی سے کوئی تعلق نہیں کیونکہ لشکر جھنگوی پر پابندی ہے (یہ ابھی تک کسی کو معلوم نہیں کہ لشکر پر کیا کرنے کی پابندی ہے ) سپاہ صحابہ پر بھی پابندی ہے جو ایک زمانے میں انجمن سپاہ صحابہ ہوا کرتی تھی ۔ ملک اِسحاق تو اہل سُنت والجماعت کے ادنٰی کارکن ہیں۔

    لیکن یہ انجمن ، یہ سپاہ، یہ لشکر، یہ جماعت کیا چاہتے ہیں اس بارے میں ہمیں کوئی اہل کار کوئی اداریہ نویس نہیں بتاتا۔ اور وہ بتائیں بھی کیوں؟ کیا پوری قوم نہیں جانتی کہ ہماری گلیوں مسجدوں اور منبروں سے کافر کافر شیعہ کافر کے جو نعرے گونجتے ہیں اُنہیں فوج، پولیس، اور خفیہ ایجنسیوں نے تو کیا روکنا تھا کبھی کسی محلے دار یا غازی کو بھی یہ توفیق ہوئی ہے کہ مودب ہو کر کہے کہ بھائیو، یہ فیصلہ اللہ پر چھوڑ دو کہ کون کافر ہے اور کون نہیں۔

    اور تو اور مولانا فضل الرّحمن بھی سانحہ مستونگ کے بعد یہ کہتے پائے گئے کہ یہ خفیہ اداروں کی سازش ہے، مسلمان کو مسلمان سے لڑانے کی سازش ہے اور مذہبی جماعتیں اس کی ہمیشہ سے مخالف رہی ہیں۔

    کیا وہ سپاہ صحابہ اور اُس پر پابندی کے بعد بننے والی تنظیموں کو غیر مذہبی قرار دے رہے ہیں۔ کیا اس مسلح مہم کے سالار حق نواز جھنگوی مولانا فضل الرّحمن کی جماعت کے ہی رہنما نہ تھے ۔کیا جھنگوی صاحب کے فرمودات آج تک جمیعت علمائے اسلام کے تنظیمی پرچوں میں نہیں چھپتے۔

    بلکہ نژاد اور خمینی جیسے ناموں کو واصل جہنم کرنے سے پہلے اُن کا شناختی کارڈ بھی چیک کرنے کی زحمت گوارا نہ کرنی پڑتی اور اگر اُس کے قتل کے الزام میں کوئی گرفتار ہوتا تو ثبوت کی عدم دستیابی کی وجہ سے باعزت بری پاتا اور پھولوں کی پتیوں کی بارش میں اس عزم کا اعادہ کرتا کہ جو کیا تھا وہ بار بار کریں گے۔
    پنجاب پر تیس سال سے حکومت کرنے والے جھنگ اور وہاں سے پھوٹنے والی اس تشدد کی لہر کا نام لیتے ہوئے ایسے شرماتے ہیں جیسے نوبیاہتا دُلہن اپنے شوہر کا نام لیتے ہوئے شرماتی ہے ۔

    تو پاکستان میں احمدی نژاد اور خمینی جیسے نجات دہندہ کے خواب دیکھنے والوں کی خدمت میں مودبانہ عرض ہے کہ اگر اس نام کا کوئی شخص پاکستان میں پیدا ہو جائے تو اُس سے نمٹنے کے لیے کسی انجمن، کسی لشکر، کسی جماعت کا ایک ادنی کارکن ہی کافی ہے۔

    بلکہ احمدی نژاد اور خمینی جیسے ناموں کو مٹا کر ’ثوابِ دارین‘ حاصل کرنے سے پہلے اُن کا شناختی کارڈ بھی چیک کرنے کی زحمت گوارا نہ کرنی پڑتی اور اگر اُس کے قتل کے الزام میں کوئی گرفتار ہوتا تو ثبوت کی عدم دستیابی کی وجہ سے باعزت بری پاتا اور پھولوں کی پتیوں کی بارش میں اس عزم کا اعادہ کرتا کہ جو کیا تھا وہ بار بار کریں گے۔

    http://www.bbc.co.uk/urdu/columns/2011/09/110923_shia_column_hanif_zs.shtml

  3. very nice job bros……… khuda in zalimon ko jald az jald apne kaifar e kirfar tak phonchai amin………r in ko support karne walon ko b…………..imran khan must ve rejected by us….

Trackbacks

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: