We condemn brutal murder of seven non-Baloch labourers in Turbat

by admin

The attack left five workers on the spot, while two others failed to recover from their injuries and passed away in Turbat Hospital. (Photo: Dawn)


At least seven non-Baloch labourers, mainly from Sindh and FATA, were killed on 14 February 2012 in a targeted attack in Turbat, Balochistan. Another two labourers were injured. According to news reports, the banned Baloch Liberation Front (BLF) has claimed responsibility for the attack. Labourers were engaged in construction work in Buleid’s mountainous area when a group of armed men attacked them.

Turbat attack leaves 7 dead, 2 injured
Source: Express Tribune, February 14, 2012

At least seven people were killed and two were injured in Turbat’s Kech district when they came under attack from a group of armed men on Tuesday. According to Balochistan Levies, a group of men armed with sophisticated automatic weapons opened fire on the labourers, who had camped along the under construction road. The assailants also torched the machinery and three company vehicles. The assailants managed to escape after the incident, while the banned Baloch Liberation Front (BLF) claimed responsibility for the attack.
Talking to reporters from an unspecified location, BLF spokesperson Duda Baloch said that his organisation carried out the deadly attack and warned that they will target companies involved in construction or exploration (oil and gas) projects.
The deceased and injured had been shifted to the district headquarters hospital.
The victims, belonging to Sindh and Waziristan, were identified as Ahmed Khan Bashir s/o Haleem Khan, Shah Amanullah, Zarman Den, Naseeb Khan, Sheikh Salam, Asmatullah, Rafiullah.

We strongly condemn this act of violence by Baloch militants, particularly in view of the fact that they chose to attack poor, non-Baloch labourers who are as deprived as the majority of the Balochs. It is our considered opinion that acts of violence against on-combatant civilians undermines the Baloch nationalists’ legitimate struggle for equal rights or/and freedom. While we don’t indulge in false neutrality between systematic violence by Pakistan army and its various agencies against the Balochs and the acts of reactionary violence by Baloch nationalists, we strongly condemn all forms of violence by all parties against non-combatant civilians.

3 Comments to “We condemn brutal murder of seven non-Baloch labourers in Turbat”

  1. A gun-attack in the Turbat region of Balochistan killed seven people and injured two others, DawnNews reported on Tuesday.

    According to security officials, 12 men were working on restoring a road in Turbat Municipality, when unidentified gunmen opened fire at them.

    The attack left five workers on the spot, while two others failed to recover from their injuries and passed away in Turbat Hospital.

    Banned nationalist outfit Balochistan Liberation Front (BLF) has claimed responsibility for carrying out the attack.

    The attackers, who fled the scene, also set fire to three vehicles belonging to the road-works team.

    An earlier attack (January 12) in the same area killed 14 FC personnel.

    http://www.dawn.com/2012/02/14/seven-killed-two-injured-in-turbat-gun-attack.html

  2. In defence of Punjabis: Stop target killing of Punjabi settlers in Balochistan
    http://criticalppp.com/archives/9851

  3. Their families were too poor to transport their dead bodies to their places of origin. Why were they killed?

    تربت کے مزدوروں کی لاشیں کراچی منتقل
    آخری وقت اشاعت: بدھ 15 فروری 2012 ,‭

    بلوچ لبریشن فرنٹ کا کہنا ہے کہ صوبے میں تیل اور گیس کی تلاش کا کام جاری رہا تو حملے ہوتے رہیں گے۔
    بلوچستان کے ضلع تربت میں مسلح افراد کے حملے میں ہلاک ہونے والے سات مزدروں کی لاشیں کراچی پہنچائی گئی ہیں۔ منگل کو تربت کے علاقے بلیدہ میں تعمیراتی کمپنی کے کیمپ پر حملہ کیا گیا تھا۔
    کراچی کے ایدھی سرد خانے میں ساتوں مزدروں کی لاشیں موجود ہیں جن کا تعلق جنوبی وزیرستان اور سوات سے بتایا جاتا ہے۔
    اسی بارے میں
    بلوچستان: فائرنگ سے سات مزدور ہلاک
    بلوچستان: فائرنگ سے دو افراد ہلاک
    ’بلوچستان میں انسانی حقوق کی صورتحال انتہائی گمبھیر‘
    متعلقہ عنوانات
    پاکستان, بلوچستان
    ہلاک ہونے والوں کے ایک ساتھی محمد نور نے بتایا کہ وہ حملے والی جگہ سے تھوڑے فاصلے پر موجود تھے، ان سے پہلے جائے وقوع پر لیویز اہلکار پہنچے۔ ’ہلاک ہونے والے مزدوروں کو کئی کئی گولیاں لگی ہوئی ہیں جو زیادہ تر سر اور چہروں پر ماری گئی تھیں۔ حملہ آوروں نے وہاں موجود گاڑیوں کو بھی نذر آتش کردیا۔‘
    کراچی سے بی بی سی اردو کے نامہ نگار ریاض سہیل کے مطابق ہلاک ہونے والوں کی شناخت عظمت اللہ، زرمدیل، شیخ سلام، محمد رفیق، بشیر بٹنی، امانتی خان اور شمانی خان کے نام سے کی گئی ہیں، جن کی عمریں بیس سے پچیس سال کے درمیان ہیں۔
    “یہ ایسی سڑک تھی جس کی تعمیر سے مقامی لوگ بھی خوش تھے اور یہ کمپنی گزشتہ بارہ سالوں سے یہاں کام بھی کر رہی ہے اس لیے انہیں پریشانی نہیں تھی۔”
    محمد نور
    محمد نور نے بتایا کہ ہلاک ہونے والوں کی لاشیں پہلے تربت ہپستال منتقل کی گئیں، جہاں پوسٹ مارٹم کے بعد ان کے حوالے کی گئیں وہ ایک بس میں یہ لاشیں کراچی لائے ہیں۔
    اس تعمیراتی کمپنی میں سو کے قریب مزدور کام کرتے ہیں، کمپنی کو چالیس کلومیٹر روڈ کی تعمیر کرنی ہے جس میں سے نصف بن چکا ہے۔
    محمد نور کا کہنا ہے کہ بلوچستان میں ایک جنگی صورتحال ہے، اس لیے پشتون اور پنجابی برداری کے زیادہ تر لوگ چلے گئے ہیں چونکہ یہ ایسی سڑک تھی جس کی تعمیر سے مقامی لوگ بھی خوش تھے اور یہ کمپنی گزشتہ بارہ سالوں سے یہاں کام بھی کر رہی ہے اس لیے انہیں پریشانی نہیں تھی۔
    تعمیراتی کمپنی کے ان مزدوروں کی حفاظت کے لیے کچھ لیویز اہلکار بھی تعینات تھے، محمد نور کے مطابق اس حملے کے وقت وہ اہلکار موجود نہیں تھے۔ ’اب مزدور خوفزدہ ہیں، انہیں تحفظات بھی ہیں اس لیے دوبارہ کام کرنا مشکل ہوگیا ہے۔‘
    یاد رہے کہ بلوچ لبریشن فرنٹ نے اس واقعے کی ذمہ داری قبول کی تھی، فرنٹ کے ترجمان ڈوڈا بلوچ کا کہنا تھا کہ پہلے بھی کمپنیوں سے کہا گیا تھا کہ وہ صوبے میں تیل اور گیس کی تلاش کا کام نہ کریں اور اگر یہ کام جاری رہا تو حملے بھی ہوتے رہیں گے۔
    ہلاک ہونے والے مزدوروں کے ایک اور ساتھی سفیر محسود نے بتایا کہ لاشوں کی حالت ایسی نہیں ہے کہ انہیں آبائی علاقوں کی طرف روانہ کیا جائے، اس لیے علماء نے انہیں کراچی میں دفن کرنے کا مشورہ دیا ہے اور انہیں شہید قرار دیا گیا ہے

    http://www.bbc.co.uk/urdu/pakistan/2012/02/120215_turbat_labour_bodies_karachi_tk.shtml

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: