Dear Express Tribune, they are Shia too! – by Mustafa

by admin

While it is certainly commendable that Express Tribune (ET) has reported the protest demo organized by the youth of Parachinar, time when majority of the news outlets have with blithe disregard ignored it (as usual, for example this largest protest against target killing of Shias was blacked out by Pakistani media: criticalppp.com/archives/72401), the reporter, or perhaps the editor of ET needs to be reminded that the people of Parachinar are Shia too! At least 49 Shia Muslims were massacred by ISI-backed Haqqani Taliban (good Taliban) and the subsequent firing by Pakistan army/FC on 17 February 2012.

The news report refers to people of Parachinar as ‘Parachinaris’, ‘Turi-Bangash tribes’, ‘Anti-Taliban’ et al, but ignored their most important identity, the one they are targeted for: their faith. Not once in the entire piece have they been referred to as Shia. This is disgraceful.

The people of Parachinar are Shia; they have resisted the Talibanization of their area, disallowed the use of their area as a conduit for terrorist activities, and refused to act as ISI’s terror tools. And this is what they are being punished for by the ISI through Taliban. This is the real story, even if not a scoop!

Last but not least, ET seems to be short of photographers or cameras because no picture of the actual protest was published. Here’s one picture with very clear message about who do Parachinar’s Shia Muslims consider responsible for their ongoing massacre and persecution. Read this banner in the Shias protest in Islambad: Who is behind the SSP-ASWJ-Taliban bombers? Pakistan army! The picture was published by Pakistan Today.

Condemning the parachinar blast: Youth of Parachinar workers protest against the suicide bombing in Parachinar targetting Shia Turi tribesmen at D-Chowk in Islamabad. ONLINE

9 Comments to “Dear Express Tribune, they are Shia too! – by Mustafa”

  1. Ignored voices: Parachinar youth protest ‘Taliban brutality, state negligence’
    By News Desk
    Published: February 21, 2012

    The blast is one of the deadliest attacks in the restive area for years.
    Hundreds of youth held a protest rally outside the parliament on Monday against the recent suicide attack in a Parachinar market, said a press release issued by the Youth Association of Parachinar.
    Protestors chanted slogans against the government and authorities for their failure to protect the Turi Bangash tribes of Parachinar.
    They blamed some elements in the security forces for targetting those who are resisting the terrorists. The youth argued that the people of Parachinar have faced four years of terrorism in which more than 1,500 Turi Bangash tribesmen have been murdered and over 5,000 have been injured. Furthermore, they argued that the Thall Parachinar Road was closed only for anti-Taliban Turi Bangash tribes but opened for both security forces and Taliban fleeing to Orakzai and Waziristan.
    When the security of Parachinar and upper Kurram was in the hands of Turi Bangash volunteers serving on check posts, no incident of terrorism or suicide occurred, said a youth at the protest. However, in the three months the army and FC has taken charge of check posts, the action has converted a Parachinar city into a security state, he added. He further maintained that during the summer of 2011 they protested in Islamabad by setting up a protest camp continuously for four months against Taliban brutality. However, civil societies and human rights organisations did not give them due coverage.
    Another protester alleged support was now being given to supporters of Difa-e-Pakistan and missing persons, a majority of whom are Taliban and killers of innocent Pakistanis especially Parachinaries. They also threatened to stage a sit-in in front of General Headquarters if their demands were not met.
    The protesters demanded that the alleged mastermind of the suicide attack, Taliban Commander Fazal Saeed Haqani should be hanged and given exemplary punishment. They also sought court martial and exemplary punishments for security personnel and FC men who opened fire on protesters and crushed them under tanks.
    Enraged protesters demanded the immediate release of the Parachinaries who have been abducted by Taliban especially Qaiser Hussain, an MSc student and two other children who were abducted by Taliban on March 25, 2011 at Bagan Lower Kurram. They also sought the removal of security check posts at Parachinar immediately and deployment of levy force, demanding the establishment of Fata Medical College for Parachinar that was approved by former Prime Minister Benazir Bhutto.
    “We also want restoration of PIA flights to the area immediately because many injured persons have died due to lack of medical facilities en route to Peshawar,” added Anwar, a protester.
    Published in The Express Tribune, February 21st, 2012.
    Comments (7)
    Share this article
    Print this page
    Email a friend

    RELATED STORIES
    20 Feb 2012
    Blast aftermath: Parachinar death toll climbs to 43
    19 Feb 2012
    Parachinar bomb blast: Tribes to file FIR against Taliban faction leader
    18 Feb 2012
    Sectarian attack: Suicide blast kills 31 in Parachinar
    19 Feb 2012
    Another massacre
    Share this article
    Reader Comments (7)
    ALL COMMENTSREADER’S RECOMMENDATIONS
    zehra
    18 hours ago
    Reply
    i wondere till when will they be left to suffer alone!! it just infriuates me the way the media and the polictacl parties ignore parachinar!!
    Recommend7

    IFTIKHAR-UR-REHMAN
    16 hours ago
    Reply
    Like Balochistan , Parachinar is also being ignored by the authorities and Taliban have been given a free hand. Have we handed over PARACHINAR to taliban on a silver platter???? or is PARACHINAR not a part of PAKISTAN????
    Recommend2

    FJ
    16 hours ago
    Reply
    They are not targeted because of their tribe, it’s because they are shia!

    http://tribune.com.pk/story/339355/ignored-voices-parachinar-youth-protest-taliban-brutality-state-negligence

  2. PESHAWAR – Taking strong exception to last Friday’s suicide explosion at Parachinar, which killed over 40 individuals, the Kurram Agency political administration on Monday demolished the houses of three Taliban commanders. Banned Tehreek-e-Taliban Pakistan (TTP) Kurram Agency commander Fazal Saeed had claimed responsibility for Friday’s suicide attack which targeted Shia Turi tribesmen. The tribesmen declared Fazal Saeed their enemy and urged the government to take stern action against him.
    Officials informed that heavy contingents of law enforcing agencies cordoned off the houses of Fazal Saeed and his relatives at Ochat village in Lower Kurram Agency. Upon confirmation of identity, authorities demolished the three houses. The two other houses were owned by Khalil Ur Rehman and Mohammad Karim, considered close relatives of Fazal Saeed.
    Fazal has not spoken about the demolition of his and his relative’s houses. Fazal Saeed was known to be amongst a list of what officials claim are “good Taliban.”
    Officials said good Taliban are peaceful inside Pakistan while they resist US-led allied presence across the border in Afghanistan. Meanwhile, security forces continued action against militants in Upper Kurram Agency on Monday. They used gunship helicopters to bomb suspected hideouts of alleged militants in Marghan. Officials claimed that eight militants were killed and three dins were destroyed.

    http://www.pakistantoday.com.pk/2012/02/after-parachinar-bombing-kurram-admin-turns-on-%E2%80%98good-taliban%E2%80%99/

  3. Mastermind of Parachinar massacre was a good Taliban, spared by Pakistan army in the sham operation:

    Read this banner in the Shias protest in Islambad: Who is behind the SSP-ASWJ-Taliban bombers? Pakistan army!

    ……..

    After Parachinar bombing, Kurram admin turns on ‘good Taliban’
    News Comments (0)
    Staff Report Monday, 20 Feb 2012 10:56 pm

    Condemning the parachinar blast: Youth of Parachinar workers protest against the suicide bombing in Parachinar targetting Shia Turi tribesmen at D-Chowk in Islamabad. ONLINE
    PESHAWAR – Taking strong exception to last Friday’s suicide explosion at Parachinar, which killed over 40 individuals, the Kurram Agency political administration on Monday demolished the houses of three Taliban commanders. Banned Tehreek-e-Taliban Pakistan (TTP) Kurram Agency commander Fazal Saeed had claimed responsibility for Friday’s suicide attack which targeted Shia Turi tribesmen. The tribesmen declared Fazal Saeed their enemy and urged the government to take stern action against him.
    Officials informed that heavy contingents of law enforcing agencies cordoned off the houses of Fazal Saeed and his relatives at Ochat village in Lower Kurram Agency. Upon confirmation of identity, authorities demolished the three houses. The two other houses were owned by Khalil Ur Rehman and Mohammad Karim, considered close relatives of Fazal Saeed.
    Fazal has not spoken about the demolition of his and his relative’s houses. Fazal Saeed was known to be amongst a list of what officials claim are “good Taliban.”
    Officials said good Taliban are peaceful inside Pakistan while they resist US-led allied presence across the border in Afghanistan. Meanwhile, security forces continued action against militants in Upper Kurram Agency on Monday. They used gunship helicopters to bomb suspected hideouts of alleged militants in Marghan. Officials claimed that eight militants were killed and three dins were destroyed.

    http://www.pakistantoday.com.pk/2012/02/after-parachinar-bombing-kurram-admin-turns-on-%E2%80%98good-taliban%E2%80%99/

    Mastermind of Parachinar massacre is a graduate of DPC chairman’s madrassa. Thank you, Sami-ul-Haq

    #DifaePakistan’s chairman’s student, Mufti Saeed Haqqani, killed 50 Shias in Parachinar: http://www.bbc.co.uk/urdu/pakistan/2012/02/120220_taleban_home_razed.shtml

    کرم میں طالبان کمانڈر کے گھر مسمار
    آخری وقت اشاعت: پير 20 فروری 2012 ,‭ 11:53 GMT 16:53 PST
    Facebook
    Twitter
    دوست کو بھیجیں
    پرنٹ کریں

    پاکستان کے قبائلی علاقے کرم ایجنسی میں حکام کا کہنا ہے کہ چار دن قبل مبینہ طورپر پارہ چنار خودکش دھماکے کی ذمہ داری قبول کرنے والے طالبان کمانڈر فضل سعید حقانی کے تین مکانات کو تباہ کردیا گیا ہے۔
    “فضل سعید حقانی نے گزشتہ سال جون میں کالعدم تنظیم تحریک طالبان پاکستان سے منحرف ہوکر ’ تحریک طالبان اسلامی پاکستان‘ کے نام سے ایک الگ گروپ بنانے کا اعلان کیا تھا۔ انہوں نے خودکش حملوں، بازاروں اور مساجد پر ہونے والے حملوں کو حرام اور دہشت گردی بھی قرار دیا تھا”
    پشاور میں فرنٹیر کور کے ایک ترجمان نے بی بی سی کے استفسار پر تصدیق کی کہ پیر کی صبح سکیورٹی فورسز نے لوئر کرم ایجنسی کے علاقے اوچت کلی میں سرچ آپریشن کے دوران طالبان کمانڈر فضل سعید حقانی کے تین مکانات اور حجروں کو مسمار کردیا ہے۔ آپریشن کے دوران آس پاس کے مقامات میں کرفیو نافذ کرکے تمام علاقہ سیل کردیا گیا تھا۔
    اسی بارے میں
    پارا چنار دھماکہ، ہلاکتیں اکتیس ہوگئیں
    لوئر کرم میں حملہ، سات سکیورٹی اہلکار ہلاک
    ’بھرپور آپریشن نہ ہونے سے ہلاکتیں زیادہ‘
    لیکن مقامی لوگوں کا کہنا ہے کہ آپریشن میں طالبان کمانڈر اور ان کے رشتہ داروں کے چار مکانات، دو حجرے اور ایک پیٹرول پمپ کو تباہ کیاگیا جبکہ ان میں فضل سعید کا اپنا ایک گھر اور حجرہ بھی شامل ہے۔
    جمعہ کو کرم ایجنسی کے صدر مقام پارہ چنار میں ہونے والے ایک خودکش حملے میں چالیس کے قریب افراد ہلاک اور پچاس سے زآئد زخمی ہوئے تھے۔ مقامی صحافیوں اور اخباری اطلاعات کے مطابق اس دھماکے کی ذمہ داری طالبان کمانڈر فضل سعید حقانی نے قبول کرلی تھی۔
    خیال رہے کہ اس حملے کے بعد کرم ایجنسی میں حالات ایک مرتبہ پھر کشیدہ ہوگئے ہیں جبکہ حال ہی میں کھولی جانے والی واحد مرکزی ٹل پارہ چنار شاہراہ بھی غیر اعلانیہ طورپر بند کردی گئی ہے۔اس سے قبل یہ شاہراہ تقریباً چار سال تک بند رہی تھی تاہم امن معاہدہ کے بعد یہ واحد راستہ فریقین کے رضامندی سے چند ماہ قبل ہی کھول دیا گیا تھا۔
    یہ بات قابل ذکر ہے کہ طالبان کمانڈر فضل سعید حقانی نے گزشتہ سال جون میں کالعدم تنظیم تحریک طالبان پاکستان سے منحرف ہوکر ’ تحریک طالبان اسلامی پاکستان ’ کے نام سے ایک الگ گروپ بنانے کا اعلان کیا تھا۔ انہوں نے صحافیوں سے ملاقات میں خودکش حملوں، بازاروں اور مساجد پر ہونے والے حملوں کو حرام قرار دیا تھا ۔ انہوں نے کہا تھا کہ اس طرح کی حملوں کی اسلام قطعی طورپر اجازت نہیں دیتا بلکہ ان کے مطابق یہ کھلی دہشت گردی ہے۔
    فضل سعید حقانی کا تعلق بنیادی طورپر اورکزئی کے زمشت قبیلے سے بتایا جاتا ہے۔ انہوں نے اکوڑہ خٹک کے مشہور اسلامی مدرسہ دارالعلوم حقانیہ سے دینی تعلیم حاصل کی ہے ۔ وہ عالم دین اور مفتی بھی بتائے جاتے ہیں

  4. Protest against deadly attack in Parachinar
    Posted on February 21, 2012
    Anwer Abbas
    ISLAMABAD: Dozens of protestors, belonging to the various areas of Kurram Agency staged a protest rally against the recent deadly suicide blast at Parachinar that resulted into life loss of 29 injuring many.
    Despite rain dozens of protestors assembled outside National Press Club here, and staged a huge rally led by member of the Parliament Sajjid Hussain Turi, that marched to D-Chowk Parliament house.
    Holding placards, Pena flex and banners inscribed with the slogans against Taliban, extremists and government they remained chanting slogans against the of Gover­nment, Taliban and hardcore anti-state elements.
    After reaching D-Chowk the protestors staged a protest sit in and offered fateha for the martyrs of the suicide strike.
    Addressing the protestors at D-Chowk, Sajjid Hussain Turi said that TTI comrade Fazal Saeed Haqqani has taken the responsibility of the suicide strike against the innocent civilians, which reflects who is stan.
    He said that recent incident was an attempt to disrupt the peace of the agency and to re-close the parachianr Peshawar road to keep the residents of the agency dependent upon Taliban and agencies for their lives.
    Syed Ali Shah Kazmi, President Youth of Parac­hinar addressing the protestors highlighted that FC and security forces after the blast killed more civilians by firing and ramping with tanks.
    He demanded the Chief of Army Staff to conduct immediate court martial of the security officers who were responsible for the killings of the innocent Shia-Sunni, both tribesmen from Kurram Agency.
    Former MNA from the area, Syed Munir demanded the government and the security forces to introduce an immediate action against the Taliban commander Mullah Fazal Saeed Haqqani, prior happening of more incidents of the terrorism.
    At this occasion the protestors chanted slogans for the release of a Kurramite student of M.Phil Qaisar Jan who under the captivity of Taliaban militia led by Fazal Saeed.
    After the protest the protestors dispersed peacefully.

    http://www.thefrontierpost.com/2012/02/21/protest-against-deadly-attack-in-parachinar/

  5. Youth Of Parachinar Rally Demands Execution Of Taliban Terrorist Mullah Fazal Saeed
    The participants of Youth of Parachinar (YoP) protest rally on Monday demanded of the government to award exemplary punishment and hang the commander of Taliban terrorists Fazal Saeed Haqqani and his aides over their involvement in the bloody suicide attack on innocent people of Parachinar.

    They alleged that the chief of outlawed terrorists outfit of Taliban Mullah Fazal Saeed Haqqani was traveling in the Government’s owned double cabin to perform his notorious activities.

    According to the Shiite News Correspondent, Hundreds of Protesters specially Educated and Civilized Youth of Parachinar (YoP) of Pak-Afghan Strategic tribal areas (FATA) participated in Protest Rally held at Islamabad on Monday.
    Protesters were chanting slogans against government and authorities with for their failure to Protect Turi Bangash tribal of Parachinar who have given sacrifices since independence of Pakistan to stability of Pakistan.

    The speakers of YoP demanded the Court martial & exemplary punishment should be given to involve persons of security forces army & FC who opened direct fire (STATE TERROR) on protesters with addition to crushing them with tanks….

    They blamed the authorities especially Security forces are crushing Turi Bangash (Anti Taliban tribes who did not allowed Taliban terrorists on their land Parachinar by defeating Taliban)tribes by doing GENOCIDE and committing STATE TERRORISIM like the Friday incident of suicide attack and after that shelling on protesters with addition to crushing Youth with armed tanks murdering dozens. Youth asked a question that Security forces especially FC should answer Americans and NATO who attacked Salala check post instead of crushing its own civilians innocent tribal. They further added that People of Parachinar faced four years long Inhuman Siege blockade and state terrorism in which more than 1500 Turi bangash murdered and over 5000 injured, the Thall Parachinar Road was only closed for anti Taliban Turi Bangash tribes but Opened for both Security forces and Taliban fleeing from Orakzai and Waziristan.

    During these four years of Siege when the security of Parachinar and upper Kurram was in hands of Turi Bangash volunteers serving on checkposts no incident of Terrorism or suicicde occurred neither on civilians nor security forces Because Turi bangash people of Parachinar are civilized educated & peace loving in entire FATA. BUT now since three months when army and FC took the charge of check posts from Turi Bangash volunteers by converting a Parachinar city (having exemplary peace) into security state the last Friday Suicide attack and after that shelling and state terror on civilians is big question mark??

    They further maintained that during last summer they protested at Islamabad by setting Protest camp continuously for four months against Taliban Brutality But ironically Civil Society and Human Rights Organizations did not give them due COVERAGE as they are now giving to supporters of Terrorists so called Difa-e- Pakistan Council and missing persons. Majority of whom are Taliban the killers of innocent Pakistanis especially Parachinaries.

    They threaten that if Cruelties and state Terrorism with People of Parachinar not stopped immediately then they will stage sit in PROTEST in front of GHQ.

    They demanded of the Government for the immediate release of Abducted Parachinaries by Taliban since March 25, 2011 at Bagan Lower Kurram especially Qaiser Hussain M.Sc Physics and two other children.

    Security forces (army/FC) checkposts at Parachinar immediately be replaced with civil admin levy force.

    Fata Medical College for Parachinar sanctioned by Ex PM Benazir Bhutto & PIA Flights should be restored immediately Because many serious injured died lack of medical facilities in way to Peshawar.

    http://shiapost.com/?p=12562

    http://abna.ir/data.asp?lang=3&id=298159

  6. This press conference on 22 Feb 2012 by the affectees of Parchinar massacre and Shia scholars of Parachinar and Peshawar was ignored by the entire Pakistani media.

    فضل حقانی گروپ کو کیفر کردار تک پہنچانے اور شہریوں پر فائرنگ میں ملوث اہلکاروں کے کورٹ مارشل کا مطالبہ
    اسلام ٹائمز:پشاور میں پریس کانفنرنس سے خطاب کرتے ہوئے پارا چنار اور پشاور کے شیعہ عمائدین نے کہا کہ گزشتہ چار سال پار اچنار کے بدترین محاصرے و ناکہ بندی کے دوران ٹل پاراچنار روڈ صرف اور صرف طالبان مخالف طوری بنگش قبائل کے لئے بند تھا، جبکہ سیکورٹی فورسز اور وزیرستان اور اورکزئی سے کرم ایجنسی بھاگنے والے طالبان دونوں کے لئے کھلی یہ سڑک کھلی تھی، اس عرصہ کے دوران پارا چنار کے عوام نے حملہ آور طالبان لشکروں کی کارروائیوں میں 1500 سے زائد شہداء کی قربانی دی اور5000 سے زائد افراد کے زخمی ہونے کی صورت میں نہ صرف پارا چنار بلکہ وہاں موجود آرمی و ایف سی بلکہ پاکستان کا دفاع کیا، جس کا ثبوت یہ ہے کہ گزشتہ چار سال کے دوران پارا چنار کے بدترین محاصرے و ناکہ بندی کے دوران جب پاراچنار شہر اور اپر کرم کی چیک پوسٹوں کی سیکورٹی طوری بنگش رضا کاروں کے ہاتھ میں تھی تو کوئی بھی دہشتگردی یا خودکش حملہ نہیں ہوا۔
    یوتھ آف پارا چنار کے پلیٹ فارم سے پشاور اور پارا چنار کے شیعہ عمائدین نے فوری طور پر عملدرآمد کیلئے 4 مطالبات پیش کئے ہیں، جن میں فضل سعید حقانی نیٹ ورک کو کیفر کردار تک پہنچانے، پارا چنار کے نہتے شہریوں پر فائرنگ کرنے والے سیکورٹی فورسز کے اہلکاروں کا کورٹ مارشل، ایک سال قبل اغواء ہونے والے طالبعلم قیصر سمیت دو دیگر معصوم بچوں کی فی الفور رہائی اور پاراچنار کیلئے منظور کردہ فاٹا میڈیکل کالج اور تدریسی ہسپتال پر فوری طور پر کام شروع کرنا شامل ہے۔

    پشاور پریس کلب میں اخباری کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے مہتمم جامعہ شہید علامہ عارف حسین الحسینی علامہ عابد حسین شاکری، صدر امامیہ اسٹوڈنٹس آرگنائزیشن پشاور ڈویژن ثاقب بنگش، صدر طوری بنگش سپریم کونسل حاجی گلاب حسین طوری، جنرل سیکرٹری امامیہ جرگہ خیبر پختونخوا مظفر علی آخونزادہ، صدر انجمن مومنین پشاور سید حامد حسین، صدر پی پی کرم ایجنسی ڈاکٹر ریاض حسین شاہ اور صدر کرم اسٹوڈنٹس اعزاز طوری نے جمعتہ المبارک کے روز پارا چنار میں ہونے والے خودکش حملے پر شدید غم و غصہ کا اظہار کیا۔

    ان کا کہنا تھا کہ اس پریس کانفرنس کے ذریعے ہم پارا چنار دھماکے کے نقصانات، فوج اور ایف سی کے کردار، دھماکے میں ملوث عناصر اور 5 سال بعد شروع ہونے والی امن کی کوششوں کو درپیش چیلینجز واضح کرنا چاہتے ہیں، تاکہ میڈیا ان مسائل کو بہتر انداز میں واضح کر کے نہ صرف پاراچنار کے عوام کے ساتھ ہونے والے مظالم کو منظر عام پر لائے بلکہ ساتھ ہی شیعہ، سنی اتحاد کو سبوتاژ کرنے کی کوششوں میں مصروف وہ عناصر جو اس دھماکے میں ملوث ہیں کو بے نقاب کیا جائے، ان کا کہنا تھا کہ اب کرم ایجنسی کے اکثریتی عوام ان دہشتگرد گروہوں اور انکی سازشوں کو بخوبی سمجھ چکے ہیں، تاہم ہم چاہتے ہیں کہ وہ ایک مرتبہ پھر گمراہ نہ ہو جائیں اور امن کی کوششوں کو نقصان نہ پہنچے۔

    شیعہ عمائدین نے پریس کانفرنس میں قلیل تعداد میں موجود میڈیا کے نمائندوں کو بتایا کہ 17 فروری 2012ء بروز جمعہ دوپہر دو بجے پارا چنار شہر کے کُرمی بازار میں موبائل مارکیٹ میں دھماکہ ہوا، جس کے باعث ایک مرتبہ پھر پاراچنار کی فضاء سوگوار ہوئی اور بہت بڑا جانی و مالی نقصان ہوا، واضح رہے کی فروری 2008ء الیکشن کیمپ میں ہونے والے دھماکے کے بعد یہ دوسرا بڑا دھماکہ تھا، ان کا کہنا تھا کہ 2008ء کے دھماکے کے بعد پاراچنا ر کے عوام نے رضاکارانہ طور پر پاسداران کے نام سے ایک امن کمیٹی قائم کی، جس کے اراکین پاراچنار کے تمام داخلی راستوں پر باقاعدگی سے چیکینگ کرتے تھے اور 2008ء سے 2012ء تک پاراچنار میں اگر کوئی خودکش حملہ نہیں ہوا تو اسکا کریڈٹ پاسداران کو ہی کو جاتا ہے، انہوں نے کہا کہ 2011ء امن معاہدے کے بعد تحفظ فراہم کرنے کی شرط پر اپنا فریضہ سمجھتے ہوئے رضاکاروں نے تمام داخلی و خارجی راستوں پر موجود چیک پوسٹیں خالی کر دیں اور وہاں کے عوام نے فوج کا گرم جوشی سے استقبال کیا اور پھولوں کی پتیاں نچھاور کیں۔

    مقررین نے کہا کہ گزشتہ چار سال پارا چنار کے بدترین محاصرے و ناکہ بندی کے دوران ٹل پاراچنار روڈ صرف اور صرف طالبان مخالف پاراچنار کے طوری بنگش قبائل کے لئے بند تھا، جبکہ سکیورٹی فورسز اور وزیرستان اور اورکزئی سے کرم ایجنسی بھاگنے والے طالبان دونوں کے لئے یہ سڑک کھلی تھی، اس عرصہ کے دوران پاراچنار کے عوام نے حملہ آور طالبان لشکروں کی کارروائیوں میں 1500 سے زائد شہداء کی قربانی دی اور 5000 سے زائد افراد کے زخمی ہونے کی صورت میں نہ صرف پاراچنار بلکہ وہاں موجود آرمی و ایف سی بلکہ پاکستان کا دفاع کیا۔

    جس کا ثبوت یہ ہے کہ گزشتہ چار سال کے دوران پاراچنار کے بدترین محاصرے و ناکہ بندی کے دوران جب پاراچنار شہر اور اپر کرم کی چیک پوسٹوں کی سیکورٹی طوری بنگش رضا کاروں کے ہاتھ میں تھی تو کوئی بھی دہشتگردی یا خودکش حملہ نہیں ہوا، لیکن ظلم کی انتہاء کا مظاہرہ اُس وقت ہوا کہ جب حالیہ دھماکہ کے بعد شہریوں نے سکیورٹی اداروں کی ناکامی کیخلاف پرامن احتجاج شروع کیا تو فوج اور ایف سی کے ٹینکوں اور بکتر بند گاڑیوں نے مظاہرین کی طرف مارچ کرتے ہوئے اندھا دھند فائرنگ شروع کر دی، جس کے نتیجے میں 6 افراد موقع پر شہید ہو گئے اور ظلم اور سفاکی کی انتہاء کہ ایک نوجوان کو ٹینک سے کچل کے شہید کر دیا گیا۔

    شیعہ رہنمائوں نے کہا کہ فوج اور ایف سی نے اپنا کام یہاں پر ختم نہیں کیا بلکہ دھماکہ کے زخمیوں کو خون کا عطیہ دیکر واپس آنے والے سکول کے معصوم طالب علموں پر بھی فائرنگ شروع کر دی، جس کے نتیجے میں 4 طالبعلم شہید ہوئے، جس کی مثال غزہ میں غاصب اسرائیل اور مقبوضہ کشمیر میں ہندوستانی درندہ صفت افواج کے علاوہ دنیا کے کسی خطے میں نہیں ملتی، ان کا کہنا تھا کہ گو کہ کسی بھی ملک میں امن وامان قائم رکھنا حکومتی اداروں باالخصوص افواج کی ذمہ داری ہوتی ہے اور ہم پاراچنار میں 2012ء کے آغاز سے امن قائم رکھنے اور راستوں کو کھولنے میں فوج کے اقدام کو سراہتے ہیں لیکن دنیا کے کسی بھی ملک میں اپنا بنیادی حق مانگنا اور پُرامن احتجاج کرنا ہر شہری کا حق ہے خواہ اس کا تعلق کسی بھی مکتب سے ہو، لیکن سمجھ نہیں آتی کہ پاراچنار میں بے گناہ معصوم عوام پر ٹینکوں اور بکتر بند گاڑیوں سے چڑھائی کرکے پاک فوج اور ایف سی کے اہلکار کس طرز جمہوریت اور کیسے قوائد و ضوابط کا مظاہرہ کر رہے ہیں۔

    مقررین نے کہا کہ اگر حکومتی ادارے واقعی امن قائم کرنے کے خواہاں ہیں تو چار سال سے پاراچنار کے کانوائیوں پر حملے کرنے والے اور خودکش دھماکوں میں ملوث دہشتگرد گروہ کے سرغنہ فضل سعید حقانی جو کہ ٹل پاراچنار روڈ پر واقع اُوچت کلی میں مقیم ہے اور کھلم کھلا ہر واردات کی ذمہ داری قبول کرلیتا ہے کیخلاف خاموشی اور آپریشن کے نام پر عوام کی آنکھوں میں دھول جھونکنا بند کیا جائے اور سنجیدہ کارروائی عمل میں لائی جائے۔

    عمائدین نے کہا کہ صد افسوس! کہ پاراچنار کے معصوم لوگ اپنے بنیادی حقوق کے لئے اگر آواز اٹھاتے ہیں تو حکومتی اداروں سے یہ برداشت نہیں ہوتا اور نہ صرف گولہ باری پر اکتفا کیا جاتا ہے بلکہ ٹینکوں سے عوام کو کچلنے کا ایک نیا طرز اپنا لیا گیا ہے، ان کا کہنا تھا کہ حکومت کی طرف سے بے گناہ اور پر امن مظاہرین پر یہ دوسری بڑی جارحیت ہے، اس سے قبل اگست 2011ء میں مظاہرین پر اندھا دھند فائرنگ کی گئی، جس کے نتیجے میں 5 افراد زخمی ہوگئے تھے، مقررین نے کہا کہ پاراچنار کے تعلیم یافتہ، باشعور اور محب وطن طوری بنگش قبائل جنہوں نے قیام پاکستان سے لے کر استحکام پاکستان تک قربانیاں دی ہیں کو دیوار سے لگا گر سوتیلی ماں جیسا سلوک و نسلی کشی کرنا پاکستان کے نظریے کے کیخلاف اقدام ہے۔

    انہوں نے کہا کہ قائداعظم کو کافر اعظم کہنے والے طبقے کی باقیات طالبان، کالعدم تنظیموں اور نام نہاد دفاع پاکستان کونسل کی ریاستی سرپرستی آستین کے سانپ پالنے کے مترادف ہے، انہوں نے مزید کہا کہ پاراچنار پر طالبان مظالم اور محاصرے کے خلاف شدید گرمی میں یوتھ آف پاراچنار نے اسلام آباد میں چار ماہ مسلسل احتجاجی کیمپ لگایا تھا ،اگر ہمارے ساتھ ظلم و ریاستی جبر بند نہ ہوا تو ہم آئندہ اسلام آباد کی بجائے راولپنڈی جی ایچ کیو کے سامنے احتجاجی دھرنا دینگے اور ریلی نکالیں گے۔

    مقررین نے مطالبات پیش کرتے ہوئے کہا کہ جمعتہ المبارک کے روز پارا چنار میں ہونے والے خودکش حملے کی ذمہ داری قبول کرنے والے فضل سعید حقانی نیٹ ورک کو جی ایچ کیو اور حمزہ کیمپ حملوں کے مجرموں کی طرح کیفر کردار تک پہنچایا جائے، خودکش حملے کے درجنوں متاثرین اور مجروحین پر براہ راست فائرنگ کرنے اور ایک نوجوان کو ٹینک تلے کچلنے کر ریاستی دہشتگردی کے مرتکب ہونے والے سیکورٹی فورسز کے اہلکاروں کا کورٹ مارشل کر کے عبرت ناک سزا دی جائے، طالبان کے ہاتھوں ایک سال قبل اغوا ہونے والے پاراچنار کے طالبعلم قیصر سمیت دو دیگر معصوم بچوں کو فی الفور رہا کرایا جائے۔

    اس کے علاوہ سابق وزیراعظم بے نظیر بھٹو کی طرف سے پاراچنار کیلئے منظور کردہ فاٹا میڈیکل کالج اور تدریسی ہسپتال پر کام فوری طور پر شروع کیا جائے، اس پریس کانفرنس کا ایک قابل فکر پہلو یہ ہے کہ میڈیا کے اراکین نے اہل تشیع کے اس ایونٹ میں بھی دلچسپی کا اظہار نہیں کیا اور انتہائی قلیل تعداد میں صحافیوں نے پریس کانفرنس کی کوریج کی

    http://www.islamtimes.org/vdcgny9qzak9wy4.,0ra.html

  7. BBC Radio covers Parachinar protest 00:47 to 02:27 and 31:35 to 37:05 http://www.bbc.co.uk/urdu/multimedia/2011/10/000000_sairbeen_a_monday.shtml Why did not Pakistani media cover this?

    Dear @etribune @Dawn_News @BBCUrdu @AJEnglish You don’t have any cameras or reporters in London? http://criticalppp.com/archives/72813 #ShiaKilling #Pakistan

  8. پاراچنار میں دہشت گردی کے خلاف ریلی
    آخری وقت اشاعت: پير 20 فروری 2012 ,‭

    ریلی اسلام آباد پریس کلب سے پارلیمنٹ ہاؤس تک نکالی گئی
    یوتھ آف پارا چنار کی طرف سے کرم ایجنسی اور بالخصوص پارا چنار میں دہشت گردی اور انتہاپسندی کے خلاف احتجاجی ریلی نکالی گئی۔
    یہ ریلی اسلام آباد پریس کلب سے پارلیمنٹ ہاؤس تک نکالی گئی جس میں پارا چنار کے سینکڑوں افراد نے شرکت کی اور انہوں نے امریکہ، طالبان اور حکومتِ پاکستان کے خلاف سخت نعرے بازی کی۔

    طوری بنگش قبائل کے رہنماؤں نے مظاہرین سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ امریکہ، طالبان اور حکومتِ پاکستان قبائلی علاقوں خاص طور پر پارا چنار کے لوگوں کی نسل کشی کرنے کےلیے آپس میں ملے ہوئے ہیں۔
    پارا چنار سے تعلق رکھنے والے سابق ایم این اے سید منیر حسین نے بی بی سی کے نامہ نگار حفیظ چاچڑ سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ قبائلی علاقے اور پارا چنار گزشتہ پانچ برسوں سے مسائل کا شکار ہیں اور کبھی اس کو شیعہ سنی فساد کا نام دیا جا رہا ہے تو کبھی دہشت گردی کا نام دیا جا رہا ہے۔
    “قبائلی علاقے اور پارا چنار گزشتہ پانچ برسوں سے مسائل کا شکار ہیں اور کبھی اس کو شیعہ سنی فساد کا نام دیا جا رہا ہے تو کبھی دہشت گردی کا نام دیا جا رہا ہے”
    سابق ایم این اے سید منیر حسین
    انہوں نے بتایا کہ دہشت گردی کی وجہ سے گزشتہ پانچ برسوں میں پارا چنار کے تقریباً پندرہ سو سے زیادہ افراد ہلاک ہوئے ہیں اور ہزاروں معذور ہوئے ہیں جبکہ اس سے سینکڑوں خاندان بری طرح سے متاثر ہوئے ہیں۔
    انہوں نے کہا کہ صورتحال کی خرابی کا کبھی امریکہ پر الزام لگایا جاتا ہے تو کبھی نیٹو افواج کو اس کا ذمے دار ٹھرایا جاتا ہے لیکن پاکستان کے اندر وہ لوگ موجود ہیں جو دہشت گردی کرتے ہیں اور شیعہ سنی فساد کرواتے ہیں۔
    سید منیر حسین کے مطابق بہت سے طاقتیں پاکستان کو غیر مستحکم کرنا چاہتی ہیں اور پاکستان کے خفیہ اداروں کی ذمے داری ہے کہ وہ ان طاقتوں کی نشاندہی کریں اور اس کا مقابلہ کریں لیکن وہ اس کام میں بلکل ناکام ہو گئے ہیں۔
    یوتھ آف پارا چنار کے عہدیدار ساجد حسین نے بتایا کہ پارا چنار کے طوری بنگش قبائل جنہوں نے پاکستان بننے سے پہلے دلی جاکر قائداعظم سے ملاقات کی اور انہوں نے استحکامِ پاکستان کے لیے قربانیاں دیں لیکن آج انہیں دیوار سے لگایا جا رہا ہے اور ان کے ساتھ سوتیلی ماں جیسا سلوک کیا جا رہا ہے۔
    “پاکستان کے اداروں میں کچھ کالی بھیڑیں ہیں جو پارا چنار کے محبِ وطن لوگوں کو تباہ کرنا چاہتی ہیں”
    ساجد حسین، یوتھ آف پارا چنار
    انہوں نے کہا کہ جو لوگ پاکستان کے مخالف ہیں اور جنہوں نے قائداعظم کو برا بھلا کہا تھا، جنہوں نے اس ملک کی بنیادیں ہلا کر رکھ دی ہیں ان کو ریاستی پروٹوکول دیا جا رہا ہے اور ان کی مکمل طور حمایت کی جا رہی ہے۔
    ساجد حسین کے مطابق پارا چنار کے طوری بنگش قبائل مہذب اور تعلیم یافتہ ہیں اور وہ اپنے علاقے کو دوسرا وزیرستان نہیں بنانا چاہتے اس لیے ایک طرف انہیں طالبان مار رہے ہیں اور دوسری طرف سکیورٹی فورسز کے ٹینک پارا چنار کے لوگوں کو کچل رہے ہیں۔
    انہوں نے بتایا کہ پاکستان کے اداروں میں کچھ کالی بھیڑیں ہیں جو پارا چنار کے محبِ وطن لوگوں کو تباہ کرنا چاہتی ہیں۔
    مظاہرین نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ پارا چنار میں گزشتہ جمعے کو ہونے والے خودکش حملے کی ذمے داری قبول کرنے والے طالبان کمانڈر کے خلاف کارروائی کی جائے اور انہیں کیفر کردار تک پہنچایا جائے اور اس خودکش حملے کے خلاف احتجاج کرنے والوں پر فائرنگ کرنے والے سکیورٹی اہلکاروں کے خلاف بھی سخت کارروائی کی جائے

    http://www.bbc.co.uk/urdu/pakistan/2012/02/120220_parachinar_youth_rally.shtml

  9. #FCS chap in @etribune writes: “country’s intelligence agencies need to find out how & where these groups operate” LOL

    This poor urban chap in @etribune blog thinks Shia genocide is an act of Sunni vs Shia sectarianism. #FCS: http://blogs.tribune.com.pk/story/10267/just-call-me-muslim/

    The notion of “Just call me Muslim” is so puritanical & dishonest. People are being killed due to their sect, don’t sweep it under the rug!

    ………….

    This @etribune blog is proudly bought to you by the ISI-lovers party:
    http://blogs.tribune.com.pk/story/10311/shakil-afridi-the-lowliest-of-traitors/

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: