Sipah-e-Sahaba celebrates Shoaib Mansoor’s Bol movie

by admin


This is a belated post on prominent Pakistani film and drama-maker Shoaib Mansoor’s latest film Bol which was released in June 2011. Bol [translated as Speak] promotes adverse stereotypes about Pakistan’s most target killed and persecuted faith group, Shia Muslims. Thousands of Shia Muslims have been killed in Pakistan by Jihadi-sectarian terrorists (Sipah-e-Sahaba Pakistan, Taliban and other groups) in the last few years. In the last six months (Sep 2011 to Feb 2012), more than 240 Shia Muslims have been target killed in various provinces and areas of Pakistan.

Some of the ideas contained in the Bol movie are similar to Sipah-e-Sahaba’s propaganda about Shia Muslims.

(At least one of the actors of the movie Atif Aslam (shown as a liberal (azad khayal) Shia Muslim, a guitarist, is currently implicated in the slaughter of three girls at a concert in Lahore but that is off topic.)

The film Bol has been released by Jang Group’s Geo TV which is considered to be an extension of the ISPR and routinely peddles Pakistan army’s propaganda in its news, analyses and programmes.

Critical readers know that Shoaib Mansoor is well connected with ISPR (Pakistan army’s propaganda wing) and is known for making pro-army dramas and tele-films. A native of Karachi, Shoaib Mansoor or ShoMan (as he calls himself) is among the most influential figures in the Pakistan showbiz scene. Not unlike other urban elites of Karachi, Lahore and Islamabad, he remains very well connected to Pakistan’s most powerful institution, i.e., Pakistan army. He has consistently made dramas and movies which throw all positive light on Pakistan’s most corrupt institution (army), presenting the plunderers and usurpers of Pakistan as saviours and guardian angels. Several of the topics and themes in his movies and dramas are consistent with the broader policy of Pakistan army and intelligence agencies. It is pertinent to recall here that since 1979, Pakistan army is involved in promoting Jihadi-sectarian groups which routinely stereotype and target kill Pakistan’s Shia Muslims and other persecuted communities due to sectarian and geo-political reasons.

Shoaib Mansoor has written, produced and directed several pro-army TV programs such as Alpha Bravo Charlie (1998), Sunehre Din (1990) etc which were aired on Pakistan Television (PTV) and other channels. In 2007, Shoaib Mansoor debuted as a film director and produced Khuda Ke Liye (2007) which highlighted the issue of religious extremism and the Taliban but presented Pakistan army as saviours of Pakistani society, completely hiding the fact that Pakistan army itself is the creator and continues to remain a committed supporter and protector of the Taliban (the Good Taliban) and other Jihadi-sectarian groups.

Shoaib also produced a TV documentary on Imran Khan in 1993. Imran Khan and his PTI are currently supported by Pakistan army and its intelligence agencies in addition to the newly formed Jihadi-sectarian Difa-e-Pakitan Council.

The feature film Bol was released on 24 June 2011. The film claims to promote family planning and its central message seems to promote “bache 2 hi ache” slogan of the Islamic republic’s ministry of family planning. Within the script, it has numerous scenes and dialogues which promote adverse stereotypes about Shia Muslims.

The film was reviewed by the Central Board of Film Censors in Lahore on 8 November 2010, and received its approval the next day.

Here is a very brief summary of the plot. Zainub (Humaima Abbasi) is sentenced to death. Mustafa (Atif Aslam) advises her to tell everyone her story before she is hanged. She is allowed a last wish by the president of Pakistan and she tells her story to a large gathering of media on the gallows. It is this story which has numerous adverse references to Shia Muslims.

According to the Shia Post, the Shia community in Pakistan showed concern against the dialogues and appearance of characters in the Bol movie. Shia leaders alleged that Pakistani media, Jang Group in particular, is continuously hitting Shia Muslim in different ways and following foreign agendas. A Shia commentator said: It is a type of cultural terrorism and we condemn it, we appeal all Pakistanis to be united against such poison in society. Some Shias and Sunnis said that sex workers (prostitutes, their promoters) are there in every community, they do not represent any particular sect or faith. One Shia from North Sindh observed that this is not first hit of media against Shia Islam, before it many controversial programs and documentaries were released, which misrepresented and abused the Shia faith. One prominent scholar told the Shia Post that such character holders do not meet with the conditions of Shia Islam; they may present themselves as a Shia, while being a Shia one have to follow a “Mujtahid”, if one does not follow, cannot be entitled as a Shia. A leading Shiite activist in Pakistan said that producing these types of films is a clear evidence of Saudi inspired sectarian agenda in the country. He added that the media is full of anti-Shia propaganda, and the Bol movie is just one of several examples. It was also said that routinely in Pakistani TV dramas and movies, a Sunni Muslim is presented as a norm (offering prayer in Sunni style, going to Sunni mosque, offering Sunni rituals etc) whereas other sects, Shias, Ismailis, Ahmadis etc are totally wiped out. Following the movie, the majority of Shia Muslims have demanded the Censor Board to prevent such movies and programs which may cause sectarian stereotypes and violence.

The following comment is adapted from another Shia forum: In Bol film, a person who has a business of call-girls (prostitutes) is shown as a Shia Muslim, he is repeatedly shown wearing a locket with Hazrat Ali’s name on it, his business (prostitution) is shown to be comprising of Shia Muslims, and in one dialogue of film he says we did not ask for a Sunni mufti. Another pseudo-liberal family of a guitarist Atif Aslam is also shown to be Shia. It was also suggested without much clarification that Shia Muslims spit in any food which they serve to Sunni Muslims. The film has shown bad image of Shia Muslims. It is common knowledge that Jang Group is pro-military establishment. Geo TV is US-funded via Mir Shakil-ur-Rehman, Najam Sethi and Beena Sarwar. Jang Group recently got 50 million dollars from USA (including Voice of America) to support an anti-Pakistan sectarian agenda. They also referred to WikiLeaks documents which suggest that Israel is involved in recruiting sectarian militant in Pakistan.

Here’s a comment from another forum (Orkut): The prostitutes shown in the movie are shown to belong to Shia sect. We all know that Heera Mandi (Red Light Area) has nothing to do with Shia Islam or any other faith. Of course some sex workers may be Shias, Sunnis, Christians are may belong to any faith which is their right. Perhaps some of them may also consider it convenient to declare themselves as Shias to gain some legal concession (if any). Shoaib Mansoor is reinforcing the common stereotype, thus creating dangerous generalizations. Prostitution is not something that is specific to some creed, ethnicity or sect. To label prostitutes as Sunni, Shia, Wahabi, Muslim, Non-muslim is criminal. For example, Lahore’s Javed Iqbal was a serial killer of children and happened to be a Sunni, so all Sunnis are child rapers and serial killers? absolutely not! Adverse stereotype against Shia Islam should be strongly condemned. (Source)

The Bol movie suggests that Shias don’t get Quran taught by Sunnis and how all sex workers are apparently Shias. And Atif Aslam being the Shia guy is a guitarist with the name Mustafa and marries a Sunni girl Ayesha, that too a Sunni nikah. Epic!

Shoaib Mansoor’s aim seems to be to insert and present certain stereotypes to poison innocent brains. His first movie ‘khuda kay liye’ was certainly no exception, there he tried to prove that the prophet Dawood a.s. used to sing songs so its perfectly legitimate to listen to songs. He also did not show a single scene in Khuda Ke Liyay to show Pakistan army’s support to the Taliban, Lashkar-e-Taiba and other groups. Now his second film Bol comes with another controversy, sex workers in this film are shown to b Shias. (Is it because of the fact that to earn money some prostitutes often become Shia to get the certificate from the government to perform muttah?) It’s interesting that Shoaib Mansoor has selective information about Islam but fails miserably to know the thinking of sex workers, which is to earn money through their profession, and for that they don’t really have to follow any particular fiqh or sharia. Consider the example of Shia mourning rituals, even some Sunnis, Hindus and Christians perform these rituals for their love for Imam Hussain but that doesn’t make them Shias. Such movies are aimed to reinforce the already existing stereotypes about Shia Muslims. (Source)

Anti-Shia websites (of Sipah-e-Sahaba and Taliban) congratulate Shoaib Mansoor

Apparently, several anti-Shia Jihadi-sectarian websites are celebrating the release of Bol because it supports and reinforces their propaganda against Shia Muslims. Here is one of several examples available on the internet:

شعیب منصور کی فلم ”بول“ – شیعہ عصمت فروشی کا پردہ چاک

Shoaib Mansoor’s film “BOL” – Shia prostitution exposed

شعیب منصور کی فلم ”بول“ نے جہاں کامیابی کے نئے ریکارڈ قائم کئے ہیں وہیں اِس فلم نے باکس آفس پر بھی بزنس کا نیا ریکارڈ قائم کردیا ہے۔ ”بول“ پاکستانی سینما کی تاریخ میں ایک ہفتے کے اندر زیادہ بزنس کرنے والی پہلی فلم بن گئی ہے اور اِس سے پہلے کے جتنے ریکارڈ تھے وہ اِس فلم نے توڑ دیئے ہیں۔ شائقین فلم کی بڑی تعداد اب بھی ٹکٹوں کے حصول کیلئے سینماؤں کا رُخ کررہی ہے۔ اپنے پہلے شو سے لیکر آج تک ”بول“ مسلسل کامیابی کی جانب گامزن ہے، فلم بینوں نے بڑی تعداد میں سینما گھروں کا رُخ کرکے ثابت کردیا ہے کہ اچھی معیاری اور با مقصد فلمیں بنائی جائیں تو ہر کوئی سینما آئے گا۔

سینما مالکان ایسوسی ایشن کے چیئرمین زوریز لاشاری نے کہاہے کہ جیو فلمز کی پیشکش ”بول“ نے باکس آفس پر بزنس کا نیا ریکارڈ قائم کیا ہے۔ زوریز لاشاری نے مزید کہا کہ فلم ”بول“ کے توقع سے بہت زیادہ اچھے نتائج آرہے ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ ہمیں بہت خوشی ہے کہ پاکستان میں اب اس طرح کی فلمیں بن رہی ہیں اور جب اس جیسی پروڈکٹ بنے گی تو ساری دُنیا دیکھے گی اور سراہے گی۔

شیعہ علماء کونسل کا کہنا تھا کہ فلم کے اندر ایسے مناظر دکھائے گئے ھیں جس سے شیعہ مذہب کو ٹھیس پہنچی ھے۔ واضح رہے کہ فلم بول میں ایسے مناظر پیش کئے گئے ہیں جس سے شیعہ مذہب کا پردہ چاک ہوا ھے جس کی وجہ سے شیعہ مذہب میں شدید غم و غصہ پایا جاتا ھے۔

+++ شعیب منصور نے حقیقت دکھائی تو خفا ھو گئے +++
+++ آئینہ جب ان کو دکھایا تو برا مان گئے +++

شیعہ مذہب کی حقیقت کا پردہ چاک کرکے جیو !!!۔

Source: Islamic Forum ; Haqq Forum

Shia Muslims protest

Several Shia Muslim activists and scholars protested last year against the release of this movie. Such demonstrations were organized in Karachi, Lahore, Hyderabad and other cities of Pakistan, in which participants chanted against Shoaib Mansoor, Atif Aslam, Mir Shakil-ur-Rehman, Sipah-e-Sahaba, Geo TV and Jang Group.

کراچی: جیو ٹی وی کی فلم ”بول” کے خلاف شیعہ علماء کونسل کا احتجاجی دھرنا

Source: Shia Forums

شیعہ علماء کونسل کی اپیل کر جمعرات کے روز جیوٹی وی اور جنگ اخبار کے دفتر کے باہر جیوٹی وی کی فلم ”بول” کے خلاف احتجاجی دھرنا دیا گیا۔

شیعہ علماء کونسل پاکستان کے زیر اہتمام آج جیو ٹی وی اور جنگ اخبار کے دفتر کے باہر جیو ٹی وی کی فلم ”بول” کے خلاف بڑا احتجاجی مظاہرہ کیا گیا جبکہ جنگ اخبار کے دفتر کے باہر احتجاجی دھرنا دیا گیا۔
واضح رہے کہ جیو ٹی وی کی فلم ”بول” میں ایسے مناظر پیش کئے گئے ہیں جس سے ملت جعفریہ کے تشخص کو نقصان پہنچانے کی کوشش کی گئی ہے جس کی وجہ سے ملت جعفریہ میں شدید غم و غصے کی لہر دوڑ گئی ہے۔

شیعہ علماء کونسل کی اپیل پر جیوٹی وی کی فلم ”بول”کے خلاف جیوٹی وی کے دفتر کے باہر احتجاجی مظاہرہ کیا گیا اور دھرنا دیا گیا، احتجاجی دھرنا ایک گھنٹے سے زائد جاری رہا۔

مقررین نے شرکائے احتجاج سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ فلم کے اندر ایسے مناظر بنانا کہ جس سے ملت جعفریہ کے ملی تشخص کو ٹھیس پہنچائی جائے اور مکتب اہل بیت علیہم السلام کی توہین کی جائے ہرگز ہرگز برداشت نہیں کیا جائے گا؟

انھوں نے جیو ٹی وی کی انتظامیہ کو متنبہ کیا کہ اگر اس فلم کو نشر کیا گیا تو حالات کی خرابی کی تمام تر ذمہ داری جیو ٹی وی کی انتظامیہ پر ہوگی۔

اس موقع پر مقررین نے حکومت سے بھی مطالبہ کیا کہ جیو ٹی وی کے خلاف سخت سے سخت کاروائی کی جائے اور اسے بند کر دیا جائے کہ جس پر مذاہب کی توہین پر مبنی پروگرامات کی ترویج کی جاتی ہے۔

واضح رہے کہ گذشتہ روز شیعہ علماء کونسل کے رہنماؤں نے پریس کانفرنس کرتے ہوئے بھی جیو ٹی وی کی انتظامیہ کو اس شرانگیز ی اور شیطانی کام سے روکنے کے لئے متنبہ کیا تھا تاہم آج شیعہ علماء کونسل کی اپیل پر جیو ٹی وی کے دفتر کے باہر زبر دست احتجاج کیا گیا ہے۔

پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے شیعہ علماء کونسل پاکستان کے رہنماؤں مولانا ظفر عباس تقوی، مولانا جعفر سبحانی، مولانا شبیر میثمی، مولانا شہریار رضا اور مولانا حسن رضا نے کراچی میں جاری مسلسل شیعہ عمائدین کی ٹارگٹ کلنگ کی بھی شدید مذمت کی اور حکومت سے مطالبہ کیا کہ حکومت شیعہ عمائدین کی ٹارگٹ کلنگ میں ملوث دہشت گرد عناصر کو گرفتار کر کے قرار واقعی سزا دے۔

If stereotyping of a faith or sect is bad, stereotyping of sex workers is unacceptable too

The aims of this post is not to assert that somehow sex workers (prostitutes etc) are unclean, bad or not pure enough to be called a Muslim, Shia or Sunni. For any one who is aware of history knows that some, not all, famous Tawaifs were Shia (e.g., Umrao Jan Ada, a fictional character is also shown to be a Shia). However, it’s not that sect of a prostitute is important, but the fact that a sect is associated with a particular profession is objectionable.

The psyche which considers sex workes as bad or impure would not let them associate with Karbala or Madinah or allow them to call themselves as Shias or Sunnis is more nauseating.

Clearly, at leat some of the passages quoted in the post above are based on comments from puritanical Shia clerics or Shia middle class who have been so devastated by the mainstream pressure that they want to confrom to normative values of Islam dictated by the Sunni majority population. Under pressure of the majority population, such Shias don’t want to do zanjeer zani, or matam, or say Ya Ali Madad, they don’t want to have any ‘polytheistic’ rituals on Ashura etc. Such puritanical trends are as dangerous for the Shia cause as a puritanical Salafi-Deobandi ideology is dangerous for moderate Sunnni identity. Pakistan’s Shias and Sunnis don’t need to become a puritanical Salafi-Wahhabi to live in Pakistan, we need to live as we have lived with all our rituals. And we have no right to debar any one from Shia or Sunni community even if she lives in heera mandi. It is same mentality as SSP, they call Shias kafir and the puritanical Shias are calling most helpless members of their faith to get lost, you filthy creatures don’t belong to us. It is the attitude which was reflected by the Jews who were appointed by Nazis as gaurds of Auswitz, they hated Jews more than the Nazis.

Our criticism of Bol is based on aspects that it stereotyped an already persecuted community, and that it decontextualized the issues of gender (and also homosexuality). It used a stereotypical picture of heera mandi. However, this post is not an attempt to disown the members of the community who don’t conform to certain puritanical attitudes of neo-Shia Islamists! It must also be acknowledged that Bol has also humiliated the Sunni puritanical person’s hypocrisy where he sleeps with a Shia prostitute but will not let his daughter marry a Shia boy, and that eventually the Sunni girl (Ayesha) marries a Shia boy (Mustafa)!

17 Responses to “Sipah-e-Sahaba celebrates Shoaib Mansoor’s Bol movie”

  1. اس فلم میں طوائف اور اس کے دلال کا تعلق شیعہ مذہب سے دیکھایا گیا ہے اور طوائف اور دلال کے گلے میں ” علی وارث ع” کا لاکٹ بھی دکھایا گیا ہے معازاللہ اللہ کی بے شمار لعنتین نازل ہوں شعیب منصور جیو ٹی وی اخبار جنگ اور ہر اس شخص پر جس نے اس پلید فلم کو بنانے میں تعاون کیا بے شمار لعنت اہل تشیع کے دشمنوں پر

    http://www.shiaforums.com/vb/f202/1588%3B-1740%3B-1593%3B-1729%3B-1593%3B-1604%3B-1605%3B-1575%3B-1569%3B-1705%3B-1608%3B-1606%3B-1587%3B-1604%3B-1705%3B-1575%3B-1575%3B-1581%3B-1578%3B-1580%3B-1575%3B-1580%3B-1740%3B-1583%3B-1726%3B-1585%3B-1606%3B-1575%3B-7541/

  2. فلم “بول” کا تنقیدی جائزہ

    جیو کے بینر تلے “خدا کیلیے” والے شعیب منصور کی فلم “بول” کا آج کل بہت چرچہ ہے۔ بلکہ انڈیا میں بھی اسے بہت پسند کیا جا رہا ہے۔ سو ہم نے سوچا کیوں ناں اس فلم کو دیکھ کر اس کا تنقیدی جائزہ لیں۔ بول فلم انتہائی حساس موضوع پر بنائی گئی ہے۔ کہانی اچھی ہے مگر “خد کیلیے” والی فلم کی طرح اس میں بھی مذہب کو منفی انداز میں پیش کیا گیا ہے۔ اگر مذہب کی تضحیق کا پہلو کہانی سے نکال دیا جائے تو کہانی بہت اچھی ہے۔ اچھا ہوتا شعیب منصور مذہب کو منفی انداز میں پیش کرنے سے اجتناب کرتے۔ مگر لگتا ہے جن لوگوں نے اس فلم میں سرمایہ کاری کی ہے ان کا مقصد ہی یہی تھا کہ جتنا ہو سکے لوگوں کے دلوں میں اسلام کی نفرت کا زہر آہستہ آہستہ بھرا جائے۔ لگتا ہے یہ سلسلہ جاری رہے گا۔

    ایک حکیم کو مولوی بنا کر پیش نہیں کرنا چاہیے تھا۔ شعیب منصور اسے سکول ماسٹر بھی بنا سکتے تھے یا کوئی جاگیردار بنا دیتے۔ اب یہ تو اچھا نہیں لگتا کہ ایک طرف مسلمان نماز بھی پڑھ رہا ہو اور دوسری طرف وہ پہلے اپنے کھسرے بیٹے کو قتل کر دے، پھر سزا سے بچنے کیلیے مسجد کے فنڈ کی رقم تھانیدار کو رشوت میں دے دے اور پھر اپنی عزت بچانے کیلیے نہ صرف ہیرا منڈی میں قرآن پڑھانا شروع کر دے بلکہ بیٹی پیدا کر کے دینے کیلیے کنجری سے شادی بھی کر لے۔ اسے تب عقل آئے جب بچی پیدا ہو جائے مگر پھر اسے ذلیل و رسوا کر کے کنجرخانے سے باہر نکال دیا جائے۔ اس کے اکلوتے کھسرے بیٹے کیساتھ زیادتی کرنے والا حصہ کہانی میں نہیں ہونا چاہیے تھا۔

    اگر فلم کو فلم کے انداز سے دیکھا جائے تو فلم کے اداکاروں نے اپنے کرداروں سے انصاف کیا ہے۔ فلم کا اصل ہیرو گلوکار عاطف اسلم نہیں بلکہ حکیم یعنی منظر صہبائی ہے مگر اس کا گیٹ اپ بہت ہی بھونڈے طریقے سے کیا گیا ہے۔ تمام لڑکیوں نے اپنے کرداروں سے بہت حد تک انصاف کیا ہے۔ فلم کی موسیقی بہیت ہی بے جان ہے بلکہ کنسرٹ کا گانا بہت اچھا ہو سکتا تھا مگر لگتا ہے پروڈیوسر نے سارا زور صرف کہانی پر لگا دیا ہے۔ تھانیدار اور کنجر کا کردار بہت جاندار ہے۔ فلم کو اچھے طریقے سے فلمایا بھی نہیں گیا۔ اگر فلم بنانے والا چاہتا تو منظرنگاری کو اور بہتر بنا سکتا تھا۔

    مذہب کی تنقید کو اگر ذہن میں رکھا جائے تو فلم کے دس میں سے دو نمبر بھی نہیں بنتے۔ کہانی کو دس میں سے دس نمبر دیے جا سکتے ہیں۔ موسیقی کو دس میں سے تین نمبر اور فوٹوگرافی کو پانچ نمبر۔

    http://www.mypakistan.com/?p=5599

    …….

    ارتقاء حیات کا تبصرہ

    فلم کا موضوع اچھا ہے پر یک طرفہ موضوع لگا ہے
    برقع کو نشانہ بنایا گیا ہے
    والدین کو جس طرح پیش کرنے کی کوشش کی گئی ہے وہ طریقہ درست نہیں
    ہاں ایسا ہوتا ہے اکثر مگر ان کا طریقہ اور نظریہ درست نہیں
    سنی اور شیعہ پر خاص‌ تعصب دکھایا گیا ہے

    http://www.mypakistan.com/?p=5599

  3. فلم ” بول ” کہانی و مرکزی خیال

    گزشہ دنوں ریلیز ہونے والی فلم بول کے متعلق ایک خبر پڑھ کر تجسس بڑھ گیا کہ مسلک اہل تشیع نے فلم بول کے خلاف مظاہرہ کیا اور اس بات پر احتجاج ریکارڈ کرایا کہ شعیب منصور نے اس فلم کے ذریعے شیعوں کے تاثر کو خراب کرنے کی کوشش کی ہے۔

    تب سے اس فلم کو دیکھنے کی خواہش رہی اب دیکھنے کے بعدحاضر ہوں جناب فلم ” بول ” کی کہانی کے ساتھ ۔

    فلم کا آغاز دلچسپی کا عنصر بڑھانے کے لیے سسپنس سے کیا گیا ہے۔ اور وہ سسپنس ہے ۔ ایک لڑکی کے پھانسی سے قبل کچھ ” بول ” کر دنیا کو سوال دینے کی خواہش کا ۔

    یہ لڑکی ہے اس فلم کے مرکزی کردار حکیم شفاعت اللہ کی بیٹی زينب ۔

    دونوں باپ بیٹی ایک دوسرے کے مد مقابل ہیں ۔ اور ان کے مد مقابل ہونے کی وجہ ہے دین اور مذہب ۔ یعنی اعتدال بہ مقابلہ گھٹن ۔ ۔

    حکیم شفاعت اللہ مذہبی لحاظ سے اہلسنت اور ذات کے لحاظ سے دہلی کے اعلی خاندان سے تعلق رکھتے ہيں ۔ ان دو نام نہاد فضیلتوں نے حکیم صاحب کا مزاج رعونت اور خوش فہمی سے بھر پور بنا دیا ۔ گھر کو اپنے رعب میں رکھنے کے شوق نے انہیں اولاد کی محبت سے دور کر دیا تھا اور انہیں سوچنے کی بھی فرصت نہیں تھی کہ ان کا مستقبل کہاں ہے ۔

    ” میں چاہتا ہوں کہ آخرت میں میں اپنی امت کی کثرت پر فخر کرسکوں ”

    ہر مذہبی انسان کی طرح حکیم صاحب بھی اس روایت کو سر کا تاج بنا کر بیوی کو بچہ پیدا کرنے کی مشین سمجھ بیٹھے ۔بیٹیوں کی قطار میں وہ بیٹو ں کابھی انتظار کرتے رہے جس میں بیٹا ایک آیا بھی تو ادھورا یعنی لڑکی نما ۔ اس مسئلے نے ان کو اور پریشان کر دیا ۔ اس بیٹے کو انہوں نے شروع میں شرمندگی کے مارے قتل کر دینے کا فیصلہ کیا مگر باز رہے ۔وہ بچہ ساری دنیا سے کٹ کر اپنی سات بہنوں کے درمیان پرورش پاتا رہا مگر باپ کی شفقت سے محروم ۔ اور دنیا کے سرد و گرم سے انجان ۔

    مگر کب تک ان کی بڑی بیٹی زينب ( حمیمہ ملک)نے باالآخر اس مسئلے کو اپنے گھر میں اجاگر کرتے ہوئے اس کے خلاف بولنا شروع کیا اس کے اسی حق گوئی اور بے باکی نے اس کو اپنے گھرمیں بسنے نہيں دیا۔ چودہ اولادیں پیدا کرنے والے اور زندگی با ادب و با لحاظ طریقے سے گزارنے والے حکیم شفاعت اللہ کو اپنی بیٹی کا اختلاف کرنا نا گوار گزرا اور یہ ناگواری کچھ واقعات کے بعد تو زہر خند مزاج میں بدلنے لگی ۔وہ ان تمام “خرافات” کا تانا بانا جہنم او رجنت سے جوڑتے رہے ۔ مگر بیٹی نے بولنے کے ساتھ کچھ کر دکھانے کی بھی ہمت کی ۔ اورباپ کے علم میں لائے بغیر ماں کا آپریشن کروادیا بندش اولاد کے لیے ۔

    ان کے پڑوسی ماسٹر اختر حسین صاحب کا گھرایک ملنسار اور مثالی گھر انہ تھا ۔ جو جدید دور کے ایک تعلیم یافتہ اور روشن خیال انسان تھے اور برائے نام اہل تشیع تھے ۔جن کے دونوں بچے بیٹی اور بیٹا مصطفی ( عاطف اسلم ) اعلی تعلیم حاصل کر رہے تھے ۔ ان کے ساتھ مل بیٹھ کر ان سات لڑکیوں کا کچھ ہنسنابولنا ہو جاتا تھا تو ان کے چہرے پر رونق آجاتی تھی ۔

    حکیم صاحب کو غرور تھا تو اس بات کا کیوں کہ وہ زندگی مذہبی اصولوں کے مطابق گزارتے ہيں تو وہ بالکل صحیح ہیں ۔ تصاویر کے وہ خلاف تھے ۔ موسیقی ان کی نظر میں جرم تھی ۔خواتین کا بولنا ان کے لیے خطرہ ۔ بچے پیدا کرنے کا ان کا اپنا نظریہ تھا ۔ بچیوں کے رشتے طے کرنے کا ان کا اپنا معیار تھا ۔ اولاد میں پیدائشی نقص ہو جائے تو وہ کسی اور کا مسئلہ۔ اپنے کو لاجواب کرنے والے ہر سوال کو وہ تشدد اور ڈانٹ ڈپٹ سے دبانے کی کوشش کرتے تھے ۔ نظریات اور خیالات کے گھمنڈ میں وہ بھول گئے تھے کہ انسان کی سب سے پہلی ضرورت مذہب نہيں پیٹ ہے ۔ اگر آپ کا پیٹ ٹھیک ہے تو سب ٹھیک ہے ۔ فرسودہ روایات کو ماننے اور حکمت کے ناکام فن کو گلے سے لگائے رکھنے کے چکر میں انہوں نے کوئي ڈھنگ کا ذریعہ معاش نہيں بنایا بلکہ اپنے معاشی مستقبل کی طرف سے حد درجہ غافل رہے ۔ اور اگر کسی نے انہیں احساس دلانے کی کوشش بھی کی تو وہ مجرم ٹھہرا ۔ اللہ پر بھروسہ کے نام پر کاہلی کی افیون کھاتے کھاتے وہ دن آگئے جب توکل کا فلسفہ غائب ہوا اور ان کو اپنی جان اور عزت بچانے کے لیے انہی حقیر اور قابل نفرت لوگوں سے مدد مانگنی پڑی جن کو وہ ساری زندگی مذہب اور ذات کے نام پر ٹھکراتے رہے ۔ مسائل کے ان انبار نے حکیم صاحب کو مزید چڑچڑا اور بد مزاج بنا دیا ۔

    ان کے بیٹی نما بیٹے کو بہت سوچ بچار کے بعد ماں بہنوں نے گھر سے باہر کچھ کام دھندہ سیکھنے کی کوششوں میں لگا دیا ۔ مگر ان کو اندازہ نہیں تھا کہ یہ دنیا سیفی جیسے چیونٹیوں کے لیے کتنی بڑی ہاتھی ہے۔ وہ بے چارہ چند بے ہودہ لوگوں کے ہتھے چڑھ گیا ۔ گھر تو واپس آ گیا مگر حکیم صاحب نے چھپ کر اس کے آنسووں سے بھری باتیں سن لیں جو اس نے اپنی ماں اور بہنوں کے سامنے بیان کی ۔ حکیم صاحب نے اس بات کو اپنی ذات پر دھبہ سمجھتے ہوئے اپنے اس معصوم بچے کو دم گھونٹ کر مار دیا ۔ بچے کی موت اپنی آنکھوں سے دیکھ کر زینب وقتی طور پر اپنے حواس کھو بیٹھی ۔ مگر یہ بات کب تک چھپتی بالآخر پولیس نے حکیم صاحب کے احترام کو مد نظر رکھتے ہوئے اس معاملے کو نہ اچھالنے کا ارادہ ظاہر کیا بہ عوض چند لاکھ روپے ۔ مگر یہ چند لاکھ روپے بھی حکیم صاحب کے پیروں تلے زمین کھینچ لے گئے ۔ انہوں نے اپنی دکان بیچ کر وہ مسئلہ حل کیا ۔ اور اناڑیوں کی طرح روڈ پر آکر حکمت کرنے لگے ۔مگر ان کے برے رویے کی سزا اب انہیں مل رہی تھی بیوی اللہ میاں کی گائے ہو کر کچھ نہیں کہتی تھی ۔ پھر بھی حکیم صاحب کی خود غرضی کا یہ عالم تھاکہ گھر والوں کو دکھ دے سکتے تھے مگر خود کی ذات پر کوئی چوٹ برداشت نہيں کر سکتے تھے ۔ تنگ دستی اب ان کے مزاج کو اس درجہ پر لے آئی جسے ٹیبل کے اُس طرف کے لوگ گراوٹ کہتے ہيں اور اِس طرف کے لوگ اعتدال ۔

    ان کے بہتر دنوں میں ایک کنجر ذات کا چوہدری ان سے دوائی لینے آیا کرتا تھا اس نے ان کو آفر کی تھی کہ ہمارے بچوں کو سپارہ پڑھا دیں تو آپ کی آمدنی ہو جایا کرے گی ۔ اس وقت انہوں نے حقارت سے رد کر دیا ۔ مگر جب مذہب اور نسلی امتیاز کے بتوں سے کوئی روٹی نہ نکلی تو وہ اسی کنجر کے پاس گئے اور ان شیعوں کی دکھتی رگ پکڑ کر بات کی اور اس طرح ” مولا علی “کے کرم سے روزی لگ گئي ۔ اب حکیم صاحب اپنی دکان بیچنے کے بعد تو روڈ پر آ ہی چکے تھے ۔ اس مجبوری نے ان کو انہی کنجروں کا کھاناکھانے پر مجبور کر دیا وہ ان کے نوٹوں کو گھر لا کر صابن سے دھو کر سکھا کر استعمال کرتے ۔ یعنی پاک کر کے ” بزعم خود “۔
    گھر کی غربت اور برسوں کی حبس زدہ ماحول سے تنگ عائشہ نے بالآخر ہمت کر کے مصطفی کے ساتھ ایک کنسرٹ کیا ۔ جس سے اس میں ایک خوش گوار اعتماد سا آ گیا ۔

    حکیم صاحب کے خود سر رویے کے نتائج نے اب بھی انکا پیچھا نہیں چھوڑا تھا محلے کی مسجد کے حساب کتاب میں حکیم صاحب نے بہ حالت مجبوری کچھ پیسے استعمال کر لیے ۔ اب اچانک مسجد کمیٹی نے ان سے حسابات واپس مانگ لیے تو انہیں خیال آیا کہ پونے دو لاکھ روپے انہيں کہیں سے بھی پورے کرنے پڑیں گے ۔

    انہوں نے پھر اسی چوہدری کے سامنے اپنا دکھڑا رویا تو اس دوران وہ چوہدری یہ جان کر حیرت زدہ رہ گیا کہ اتفاق سے حکیم صاحب بیٹیاں پیدا کرنے کےماہر ہيں ۔تب اس کنجر کی نظروں میں حکیم صاحب کی وقعت اور بڑھ گئی اور اس نے ان کی مجبوری کے بدلے ان سے سودا کیا اپنے ہاں ایک بیٹی پیدا کرنے کا ۔ پہلے تو حکیم صاحب ہکا بکا رہ گئے اس عجیب و غریب سودے پر کہ آج تک عورت بکتی رہی مگر یہ کیسا سودا ہے جہاں مرد بک رہا ہے۔ بہ دل نہ خواستہ انہوں نے اس طوائف سے نکاح کے ذریعے ایسا کرنے کی حامی بھر لی ۔ کیوں کہ اس کنجروں کے چوہدری نے ان یہ کہہ کر لاجواب کر دیا کہ بیٹی ہوئی تو ہماری اور بیٹا ہوا تو آپ اپنے بڑھاپے کا سہارا سمجھ کر رکھ لیں۔

    بے آب و گیاہ ویرانے میں پانی نہ ہو تو وہاں پانی آ ہی جاتا ہے ۔ زمین سے نہ آئے تو آسمان سے تو آہی جاتا ہے۔ کچھ ایسا ہی حکیم صاحب کے گھر میں ہوا ۔ان کی بیٹیاں باپ کے رویے سے مایوس ہو چکی تھیں اور انہيں یقین تھا کہ باپ کوئي ڈھنگ سے رشتہ نہيں ہونے دے گا ۔ اس لیے فرقہ پرستی کوبالائے طاق رکھتے ہوئے ایک بیٹی عائشہ کا نکاح اپنے پڑوس کے لڑکے مصطفی سے کر دیا ۔ اور موت جیسے خوف کے ساتھ باپ کے آنے کا انتظار کرتے رہے ۔ باپ جب طوائف سے سہاگ رات منا کر گھر آیا تو یہ خبر سن کر سیخ پا ہو گیا ۔ مگر کھل کر بولنے کی شوقین بیٹی نے یہاں بھی باپ کی مار برداشت کی اور اس کے احترا م میں فرق نہ آنے دیا ۔

    مفلسی سے بچنے اور کھوکھلے کردار کے بھرم کو قائم رکھنے کی کوششوں میں انہوں نے ایک طوائف کو منہ تو لگا لیا مگر وہ تھی بہر حال ایک عورت ، مزیداس کی ادائیں اور رہن سہن ان کے اعلی ظرف خاندانی راویات سے میل نہیں کھاتی تھیں ۔ توقع کے عین مطابق وہاں بھی لڑکی ہوئی ۔ جس سے ظاہر ہے حکیم صاحب کا کوئی تعلق نہیں ہونا تھا ۔مگر پھر بھی ان کے اندر تھوڑی غیرت جاگ گئی اور وہ اس بچی کو اپنے ہاں لے جانے کی کوشش کرنے لگے ۔معاہدے کی خلاف ورزی کی کوشش پر اس کنجر نے ان کو مار مار کر وہاں سے نکال دیا ۔

    حالات کے اس الٹ پھیر نے حکیم صاحب کو زبان کو تالا لگا دیا ۔کھانا ، پینا ، نمازیں وغیرہ سب بھول گئے ۔ مگر اپنے تکبر کے خول میں بند بھلا وہ اپنے دل کی بھڑاس کس کے سامنے نکالتے ،کس طرح سمجھتے کہ انہوں نے بچے پیدا نہیں کیے تھے بلکہ مارے تھے ۔بالآخر ان کی دوسری بیوی نے ان کی بچی کو ان کے گھر پہنچا دیا تو ان کی بیٹیوں پر یہ راز کھلا کہ جھوٹی روایات کا غرور سے گندھا محل زمین بوس ہو چکا ہے ۔بس ہماری نظروں سے چھپانے کے لیے چند ریت اڑائےجا رہے تھے ۔تا کہ ہم سر نہ اٹھا سکیں ۔ ہمیشہ کی طرح حکیم صاحب نے چند پھوں پھاں کر کے بولنے والوں کی آواز کو دبانے کی کوشش کی ۔

    بہر حال حسب توقع کنجر وں کے سربراہ اس بچی کو واپس لینے آگئے حکیم صاحب کا دروازہ توڑ کر ۔ یہاں بھی حکیم صاحب نے خود ساختہ غیرت مندانہ قانون کے تحت نومولود بچی کو مار دینے کا سفاکانہ فیصلہ کیا جس سے روکنے کے لیے بیٹی زینب کو باپ کے سر پر وار کرنا پڑا ۔ یہ وار اتنا مہلک ثابت ہوا کہ وہ موقع پر ہی دم توڑ گئے ۔ اور اس دماغ کا خاتمہ ہوا جس کی گرمی نے پورے آٹھ نفوس کے خاندان کا جینا حرام کر رکھا تھا ۔اب سارا طوفان تھم چکا تھا ۔کنجروں کے چوہدری کو حکیم صاحب کی بیگم نے بتایا کہ بچی کو اس کا باپ مار چکا ہے۔ اس نے مصیبت زدہ گھر دیکھ کر زیادہ تنگ نہیں کیا اور یقین کر کے چلا گیا ہمیشہ کے لیے ۔
    یہی وہ قتل تھا جس کی سزا میں اس لڑکی زينب کو سزائے موت دی گئی کیوں کہ اس نے عدالتوں میں زيادہ دفاع نہیں کیا تھا بس خاموش رہی تھی ۔ مگر اپنے بہنوئی مصطفی کے کہنے پر اس نے وزیر اعظم پاکستان سے درخواست کی کہ پھانسی سے پہلے وہ کچھ بول کر دنیا کو جگانا چاہتی ہے ۔

    اس کو میڈیا کے سامنے پیش کیا گیا اور اس نے آہستہ آہستہ اپنی کہانی دنیا کو سنائی ۔ اس دوران ایک رپورٹر نے اس کو بچانے کی بھرپور کوشش کی ۔ زینب کی بات جاری تھی مگر بات مکمل ہونے سے پہلے جیلر نے وقت کی کمی کی وجہ سے سب کو ہٹانے کاآرڈر دیا کہ پھانسی کاوقت ہونے والاہے ۔ مگر لیور کھینچنے سے پہلے تک زینب نے چلا چلا کر دنیا سے سوال پوچھا …
    کہ صرف مارنا ہی جرم کیوں ہے ؟
    پیدا کرنا جرم کیوں نہيں ہے۔ ؟
    کیوں کہ جب کھلا نہيں سکتے تو پیدا کیوں کر تے ہو ۔؟

    http://pak.net/%D9%81%D9%84%D9%85%DB%8C-%D8%AF%D9%86%DB%8C%D8%A7/%D9%81%D9%84%D9%85-%D8%A8%D9%88%D9%84-%DA%A9%DB%81%D8%A7%D9%86%DB%8C-%D9%88-%D9%85%D8%B1%DA%A9%D8%B2%DB%8C-%D8%AE%DB%8C%D8%A7%D9%84-59554/

  4. بھارتی فلموں اور ثقافت کو بھی یہی چینل پروان چڑھا رہا ہے۔
    جب ہم نے غور کیا تو معلوم ہوا کہ اصل مسئلہ پاکستانی فلموں کا زوال یا بھارتی فلموں کی مقبولیت نہیں ہے اور نہ ہی مذکورہ چینل کو بھارتی تہذیب و ثقافت کے اثر و نفوذ پر کوئی تشویش ہے بلکہ اصل مسئلہ جیو فلمز کے بینر تلے بننے والی نئی فلم ہے جس کا نام ہے ’’ بول ‘‘ بول جیوفلمز اور شعیب منصور کی دوسری فلم ہے۔ اس سے قبل خدا کے لئے بھی پیش کی جاچکی ہے۔ بول فلم کو وہ مقبولیت حاصل نہیں ہوسکی جس کی توقع کی جارہی تھی۔ فلم کے غیر مقبول ہونے کی وجہ اس کا متنازع موضوع اور غیر اخلاقی مناظر ہیں۔ معاصر جرائد کے مطابق بول فلم کی کہانی ایک مذہبی گھرانے کے گرد گھومتی ہے جس کے سربراہ کو مولوی اور ایک خاص مکتبہء فکر سے تعلق رکھنے والا دکھایا گیا ہے۔ اس کے علاوہ فلم کی کہانی میں بازار حسن کے مناظر بھی ہیں اور معروف اداکار شفقت چیمہ بازار حسن میں پائے جانے والے ایک مخصوص کردار کے روپ میں نظر آتے ہیں۔ اس کردار کو ایک دوسرے مذہبی مکتبہ فکر سے منسلک دکھایا گیا ہے جبکہ فلم کی کہانی کے مطابق اگر ان دونوں کرداروں کے مسالک کو اجاگر نہ کیا جاتا تو بھی کوئی حرج نہیں تھا لیکن مذہبی منافرت کو بڑھاوا دینے اور دین بیزاری کو فروغ دینے کے لئے ایسا کیا گیا۔ جبکہ فلم میں بد فعلی کا منظر بھی شامل کیا گیا۔ اس کے علاوہ فلم کی کہانی کا مرکزی خیال بہبود آبادی (برتھ کنٹرول ) ہے اور فلم میں اس بات پر زور دیا گیا ہے کہ اولا د کو قتل کرنے کے ساتھ ساتھ اولاد پیدا کرنا بھی جرم اور گناہ ہے اور سارا زور اس بات پر دیا گیا ہے کہ بچے پیدا نہ کیئے جائیں۔

    پاکستانی اور اسلامی روایات سے متصادم متنازع موضوع کے باعث بول فلم ناکام ہوگئی ہے۔ اب جیو گروپ اس فلم کو کامیاب کرانے کے لئے میڈیا کو استعمال کررہا ہے۔ فلم کی ریلیز سے ایک ہفتہ قبل سے لیکر اب تک جیو نیوز کے ہر بلیٹن میں کسی نہ کسی حوالے سے ’’بول ‘‘ فلم کا تذکرہ کیا جاتا ہے۔ اس کی کامیابی اور سپر ہٹ ہونے کی ویڈیو رپورٹس جاری کی جارہی ہیں۔ اور گذشتہ ماہ جنگ اخبار کو کوئی رنگین ایڈیشن ایسا نہیں ہے جس میں ایک یا آدھے صفحے کا فیچر اس فلم سے متعلق نہیں ہو۔ روزانہ کی بنیاد پر ایک یا دو خبریں بول فلم کی چلائی جاتی ہیں بلکہ آغاز میں تو تین اور چار کالمی خبر نما پبلسٹی مہم بھی چلائی گئی لیکن ان تمام باتوں کے باوجود عوام نے اس فلم کو مسترد کردیا ہے۔ اس لئے جیو گروپ اپنی اس ناکامی کو چھپانے کے لئے کبھی فلم کی کامیابی اور سپرہٹ ہونے کا دعویٰ کرتا ہے اور کبھی بھارتی فلموں کی مقبولیت اور پاکستانی سینما کے زوال کا رونا روتا ہے لیکن اصل دکھ صرف اور صرف اپنی فلم کے پٹنے کا ہے۔ کیوں کہ اگر مذکورہ گروپ کو واقعی بھارتی فلموں کی آمد اوربھارتی ثقافت کے پھیلاؤ پر تشویش ہوتی تو سب سے پہلے اپنے چینل سے بالی ووڈ کی خبروں، بھارتی فلم فئیر ایوارڈ کی تقریبات کی نمائش، نیوز رپورٹس میں انڈین گانوں کی مکسگ کو ختم کرتا لیکن ایسا نہیں ہے یعنی بقول شاعر

    ہیں کواکب کچھ نظر آتے ہیں کچھ ۔ دیتے ہیں دھوکا یہ بازی گر کھلا۔

    http://alqamar.info/2011/07/%D9%85%D8%AA%D9%86%D8%A7%D8%B2%D8%B9-%D9%81%D9%84%D9%85-%E2%80%99%E2%80%99%D8%A8%D9%88%D9%84%E2%80%98%E2%80%98-%DA%A9%D9%88-%DA%A9%D8%A7%D9%85%DB%8C%D8%A7%D8%A8-%DA%A9%D8%B1%D9%86%DB%92-%DA%A9%DB%8C.html

    جیو ٹیلی ویژن کی طرف سے فلم بول میری نظر میں بیرونی ایجنڈہ پر بنائی گئی ہے جس کا مقصد اسلام سے بیزاریت کا اظہار ہے

    فلم بول میں بعض اسلامی اصولوں کو غلط نظریے سے پیش کیا گیا کوئی بھائی ان کی وضاحت کر دے

    فلم کے شروع میں ہے حجاب پر تنقید کی گئی کہ آج کل کے دور میںجہاں گزر بس مشکل ہو تو لڑکیوں کو برقعہ اتار دینا چاہئے اور مردوں کی طرح کام کرنا چاہئے پھر ہی جا کر گھر کی روٹی پوری ہو گی کیا روٹی کے لیے کسی لڑکی کو حجاب یا برقعہ اتار دینا چاہئے ؟

    فلم میں ایک حکیم صاحب ہیں جو کے لڑکیاں ہی پیدا کیے جا رہے ہیں

    لیکن ان کی خواہش اولاد نرینہ کی ہے تو اس صورت میں ان کی بڑی بیٹی ان کو مزید بچے پیدا کرنے سے روکتی ہے تو ایک حدیث بیان کرتے ہیں

    کہ حضور اکرم صلی علیہ وسلم نے فرمایا ہے کہ مجھے قیامت والے دن اپنی کثرت اُمت پر فخر ہو گا پتہ نہیں یہ حدیث سچ ہے یا فلم میں صحیح بیان نہیں کی گئی یا میں غلط کوٹ کر رہا ہوں کوئی بھائی اس حدیث کی وضاحت فرما دے ۔؟؟

    ۔ کیا اولاد نرینہ کے حصول کے لیے لڑکیا ں پیدا کیے جانا اور جب کوئی پوچھے تو یہ کہنا کہ ہم امت محمدیہ بڑھا رہے ہیں کیا ایسا کرنا صحیح ہے ؟؟

    فلم میں جو حکیم صاحب ہیں وہ خود کو اہل سنت کہتے ہیں اور ان کا یہ مطالبہ تھا کہ وہ اپنی لڑکیوں کی شادیاں صرف سید گھارے میں کریں گے یا صرف میں اہل سنت میں

    ۔ لیکن بعد میں یہ مولوی خود مجبور ہو کر ایک طوائف سے شادی کر لیتا ہے لیکن سوال ہے ایک فرقہ دوسرے فرقہ میں شادی کیوں نہیں کر سکتا ؟

    فلم میں جو طوائف گھرانہ ہے ان کو شعیہ ظاہر کیا گیا ہے کیا شیعہ لوگ ایسے ہوتے ہیں ؟ یا صرف طوائف ہی شیعہ ہوتی ہیں ؟ عجیب منظر پیش کیا گیا ہے

    اس فلم میں حضرت علی رضی اللہ تعالیٰ کو مشکل کشا کہا گیا اور وہ بھی صرف اس بنا پے کے فلم کے حکیم صاحب نے ان کا واسطہ دے کر طوئف گھرانے کے سربراہ سے ان کے بچوں کو قرآن پاک پڑھانے کی ملازمت مانگی تھی تو حضرت علی کا واسطہ دیا گیا رو طوائف گھرانے نے حکیم صاحب کو کہا ہم اسی لیے حضرت علی کو مشکل کشا کہتے ہیں ۔

    صدر پاکستان کی نیند پر روشنی ڈالی گئی کہ چونکہ صدر پاکستان صبح کے وقت سوتے ہیں اس لیے پھانسی کا وقت بھی صبح کا ہے نا کوئی صدر کا جگا سکے اور نا کوئی کسی پھانسی کو رکوا سکے روب اور دب دبہ ہی بہت ہے پاکستانی صدر کا ۔

    بہر حال بول فلم پاکستان کے ایک غریب گھرانے کی کہانی ہے اور پتہ نہیں کتنے غریب گھر غربت سے تنگ ہیں بہر حال دوسرے ملکوں میں بھی یہ فلم دکھائی گئی جیو ٹیلی ویژن پاکستان کا بہت سافٹ امیج دوسرے ملکوں پر ڈال رہا ہے ؟جو نام نہاد روشن خیال میڈیا اس سے زیادہ نہیں کر سکتا تھا؟

    http://pak.net/%D8%B9%D9%85%D9%88%D9%85%DB%8C-%D8%A8%D8%AD%D8%AB/bol-2011-urdu-film-59452/

  5. Good post.

    This one from ET may be of interest.

    After a five-year wait and numerous leaked YouTube videos, Shoaib Mansoor’s Bol was finally premiered on Friday. Unfortunately, the film was a major disappointment and left the viewer wondering, “Why did I watch this movie?” The film’s narrative is non-linear, with the opening scene showing us Humaima Malik’s character standing in front of the gallows. We then go back in time to hear her story, which is essentially about how she and her sisters struggled to live with an oppressive father (Manzar Sehbai ) with extremist tendencies. Mahira Khan stars as Humaima’s sister and their neighbour Mustafa (Atif Aslam) is her love interest. Iman Ali is a courtesan, and Shafqat Cheema stars as her father.

    Since Atif’s involvement with the film has been highly publicised, it was surprising to learn that he does not play a significant role in Bol. Mustafa is supposed to be a pivotal character, but the weak characterisation and meagre screen time fail to create the right tension, and you are left wanting more.

    Mahira’s role suffers from chronic implausibility. Despite being an ‘obedient’ daughter, she manages to sneak away with Atif on an almost daily basis to learn how to play the guitar, and even finds the time to rock out at a concert. Her character’s actions are so pointless and unbelievable that you can hardly contain a yawn. After this, the story takes such a dramatic and unconvincing turn that it would take a thesis to point out all the narrative flaws.

    Thankfully, Humaima and Shafqat Cheema swoop in to save the day, since they actually act well. Manzar Sehbai is monotonous and under-directed — and any humour he adds to the film is unintentional.

    In fact, Sehbai’s getup and dialogue seem to be inspired by Nawab Aslam Raisani, and the character appears comic even when he is trying to be serious — surely this wasn’t the effect the director desired. Iman Ali, like Atif, has a very small role in the film, but lives up to her character. On the whole, however, the characters in the film are weak, fake and one-dimensional. Stylistically, the film is more than a disappointment, looking like a student’s first attempt rather than a seasoned director’s hyped up work. About 20 per cent of the film was out of focus and the film processing was so bad that at times it seemed like a film being aired on Filmazia. In some places the sound was not properly synchronised with the visuals, and some scenes were intercut so badly that they ruined the entire buildup of the sequence.

    This time around the music didn’t save the director either; only a few tracks are worth listening to. And a point about adding spice to Pakistani films with song and dance: if you cannot make a proper item number in Pakistan due to ‘cultural sensitivities’, don’t attempt a watered-down version either because it’ll just end up looking forced. This is exactly what happens with Hadiqa Kayani’s hip hop number “Sajania,” — I’m guessing the director had to squeeze the song in somewhere, so we are shown daughters Humaima and Mahira dancing to “Sajania” every time their father steps out of the house — a unique way of throwing off the shackles of oppression.

    Despite the accolades Khuda Kay Liye garnered, this offering is not close to what you call a feature film. It lacks even a clearly thought out story. For those who will laud Mansoor simply for the heroic act of making a film in a country like Pakistan, let me clarify that countries much worse off than Pakistan have told much better stories in more trying conditions. Here’s a piece of advice for the producers of this film: there are many thoughtful individuals working in our industry who have the capability of making better films, so please, open your eyes — it’s a win-win situation.

    To sum it up, whenever I think of Bol and Shoaib Mansoor I am reminded of the Australian cricketing legend, Adam Gilchrist, who retired from test cricket after dropping the first plum catch behind the wickets .Considering what has come out of Bol, one wonders if Mansoor will follow Gilchrist’s footsteps or become the
    Kamran Akmal of Pakistani cinema.

    Published in The Express Tribune, Sunday Magazine.

    http://www.friendskorner.com/forum/f137/news-bol-movie-protest-234528/

  6. Bol Movie against Shia (Shia ke khilaf Bol movie)

    Pakistani media hitting shia muslim with different ways and following foreign agendas.

    Geo TV aur Jang Group se mera ye sawal he:  kya Islam ko janty ho? kya tum Shia ko Janty Ho? Kya tum Sunni ko jantyho ?

    mera jahan tak kheyal he Geo ka Islam ke sath dooor door tak koi wasta he nahi, kyun k ager tum islam ko janty to India ke live shows na dikhaty or na he AAG channel ke zariyee jawano ko ghalat rasty pe lagaty.

    Bol Movie men Shia Or Sunni dono ko he badnam karny ki poori koshish ki gyi he. Kya is Movie mein shia or sunni dekhana zaroori tha. Kya har sunni aysa he jo betion ko zehmat samjhta he or apni olad ka qatal karta he? ya har Shia wesa he jo is film men dekhaya gya he? bilkul nahee

    Shia mazhab men nachana gana harram he, ager kuch log ye kaam kar rahy hen to wo Shia nahee hen. jo Hazrat Ali a.s. ke chahnay waly hen, wo ye kaam nahee kar saktay.

    Geo Pakistan or Islam ke bilkul mukhalif he. Pakistan mein pehlay he Shia or asli Sunni ko badnam karny ki koshishen ki ja rahi hen aur firqa warana fasad dalny ki koshishi ho rahi hein, takeh kisi tarah Pakistan ko tora jay or hamara media bhi yahi koshish kar k sabit kar raha he ke wo Pakistan or Islam ka dushman he.

    Shia Kiun Badnam Huvay?

    is ki wajah wo 2 grioh hein jo apny aap ko Shia kehtay hen asal men wo shia naheee hen. un k asal naam ye hen

    Ghali and Nosairi:  Ghali wo log hen jo Aimma a.s. ki fazeelat Allah kay barabar kar detay hen.

    Nosairi to Ali a.s. ko he Khuda kehty hen.

    ye dono group Mushrik hen or ye shia ban ke reh rahy hen or ye log apny aap ko shia kehty hen..

    ye baaten bohat kam he log jantay hein

    http://humdani.com/bol-movie-against-shia-shia-ke-khilaf-bol-movie/

    Jang Group ka Geo TV jo mulk men fahashi, behoodgi, islam dushmani men roz-e-awwal say apna shaitani kirdar ada kar raha hai, ab is ki Shia dushmani ka ek aur namona: Geo films ki peshkash Shoaib Mansoor ki direction men banne wali film “Bol” jo last week release howi ha, jis mein call girls ko Shia firqay ka banaya gaya, aurton kay karobar karnay walay shakhs ko “ali waris” ka locket pehnay howay dikhaya gaya, aur ek dialogue men usay ya kehte howay dikhaya ha kay “hum Sunni moulvi se nikah nhi parhwate”, guitar bajanay wali familiy ko Shia dikhaya gya, yeh bhi batanay ki koshish ki gai ke Shia khanay mein thook daal kar Sunni logon ko khilatay hain, ya film Shia musalmanon ko badnaam karnay ki mazmoom sazish ha.

    http://www.shiaforums.com/vb/f46/movie-bol-should-banned-against-shias-7743/

    ..

    Bol a Pakistani movie has shown Shias in a very poor frame. Objectives of this facebook page is to bring awareness. Lets ask Shoaib mansoor why has he insulted and attacked our community. All shias must be united to protest against it

    https://www.facebook.com/pages/Protest-against-bol-a-Pakistani-movie/179686585441793?sk=wall

  7. Shia scholar Abbas Kameeli opposes law to protect Hindus from forced conversions;
    http://ummat.com.pk/story/2012/03/18/1605/

    Why do Shia ulema do this double speak, demanding one thing for themselves and another for others? This is the same person who blamed “Qadiani Agents” for attacks on Shias. This is shameful. Let’s see how many Shias condemn this behaviour.

  8. Asslam o Alikam wr wb.film BOL main bikul thek bataia gia hy shia waqai kisi mamly main sunny Musalman k sath kisi kisam k contacts sy prhaiz krty hyn aor sahaba ko mananay ki wjha sy onsy boht nafrat krty hyn.

  9. Pakistan Blogzine, this is a perfect example of an urban-liberal-going-bonkers. Endorsing conspiracy mindset while condemning other conspiracy jokers like zaid hamid. tsk tsk. too shallow. I nominate the Pakistan blogzine’s admin for ummat newspaper editor.
    Ali

  10. @Ali

    I agree with your views, brother.

    Mein Nokar Sahaba Da

  11. I have tried to understand this post but couldn’t… I have seem BOL and didn’t notice any of these things. Perhaps I was not sensitive enough to….or was too engaged in the actual theme of the movie.

  12. Shia Allan Sajid Naqwi supports forced conversions of Hindu girls;
    http://ummat.com.pk/story/2012/03/19/1677/

    Why are Shia ulema such bigots and hypocrites? Where are the good Shia ulema if there are any? Why do Shias keep complaining when their own ulema are like that?

    • @hasan why would you tar all shia ulema with one broad stroke of your own bigoted brush? It is you who keeps an eye on only the goofs out there (that are present in EVERY sect) instead of listening to what the level-headed ones say. Kindly cleanse your own heart of bigotry, hatred and hypocrisy first and then go about making statements.

  13. @Hasan

    Bro Hasan. Ummat Akhbaar is most credible newspaper in Pakistan. I loved Shia mullah Sajid Naqvi’s picture next to Maulana Ludhianvi. Only Ummat could do that.

    Mein Nokar Sahaba Da

  14. Malik Ishaq, a few days after his release, addressed a crowd where he said ”We made Pakistan to get rid of Hindus but then we had to deal with these horse worshippers (pointing to the Shia)”. This is a well planned campaign to alienate Shia Muslims in Pakistan. Please read more on similar lines at the following:

    http://nakvisson.blogspot.com/2012/03/dont-reveal-my-secret-please.html

  15. in sheeon ko shoaib mansur na ayna jo dikhaya to bura maan ga
    film bol k pakistan aur india ma record buiznes sheea k mu pa tmancha ha k log hkikat ma sheea sa kitni nfrat krtay aur ya hakikat ha k puray pakistan k chaklay tm chla rhay ho lanat ha tm pa dushmn a ehlabat

Trackbacks

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: